‘Heat heat’ between PM and Pervez Khattak at parliamentary party meeting

parliamentary party meeting

پاکستان کی حکمراں جماعت تحریک انصاف کی پارلیمانی پارٹی کے مِنی بجٹ کی منظوری کے لیے بلائے گئے اجلاس میں مبینہ طور پر اس وقت بدنظمی پیدا ہوگئی جب وزیر دفاع پرویز خٹک نے صوبہ خیبر پختونخوا میں گیس کی عدم فراہمی کا معاملہ اٹھایا۔

پارلیمانی پارٹی کے اجلاس میں وزیراعظم اور پرویز خٹک میں ’گرما گرمی‘

تاہم بعد میں انہوں نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’میں عمران خان کے خلاف نہیں ہوں، نہ ان کے خلاف ہوسکتا ہوں، عمران خان میرے لیڈر ہیں۔‘انہوں نے کہا کہ ’میرا سوال تھا کہ گیس کی سکیمیں چلنی چاہییں، اس پر ہمارا حق ہے۔‘ اس سے قبل حکومتی ذرائع نے اردو نیوز کو تصدیق کی کہ پرویز خٹک نے اجلاس میں وزیراعظم عمران خان پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ آپ کو وزیراعظم ہم نے بنوایا ہے، خیبر پختونخوا میں گیس پر پابندی ہے، گیس بجلی ہم پیدا کرتے ہیں اور پِس بھی ہم رہے ہیں۔

پرویز خٹک کا کہنا تھا کہ اگر آپ کا یہی رویہ رہا تو ہم ووٹ نہیں دے سکیں گے۔ اس پر وہ اجلاس سے اُٹھ کر باہر چلے گئے، تاہم بعد میں وزیراعظم عمران خان نے انہیں دوبارہ اجلاس میں بلالیا۔ذرائع کے مطابق پرویز خٹک کی گفتگو پر وزیراعظم عمران خان اجلاس سے اٹھ کر جانے لگے۔ ان کا کہنا تھا کہ ’اگر آپ مجھ سے مطمئن نہیں تو کسی اور کو حکومت دے دیتا ہوں۔‘وزیراعظم کا یہ بھی کہنا تھا کہ ’حکومت اہم اقدامات کررہی ہے، گیس کی قلت کا مسئلہ جلد حل ہوجائے گا۔‘ انہوں نے مزید کہا کہ ’کوئی ایسا اضافی ٹیکس نہیں لگایا جائے گا جس سے عوام پر بوجھ پڑے۔‘

اس کے ساتھ ہی ان کا کہنا تھا کہ ’میرے کوئی کارخانے نہیں ہیں، میں کسی سے بلیک میل نہیں ہوں گا۔ میں ملک کی جنگ لڑ رہا ہوں، ووٹ نہیں دینا تو مت دو۔‘اس موقع پر وفاقی وزیر توانائی حماد اظہر اور پرویز خٹک کے درمیان بھی نوک جھونک ہوئی۔ حماد اظہر نے پرویز خٹک کے سوال کا جواب دینے کی کوشش کی تو وزیر دفاع نے کہا کہ ’آپ صرف یہ بتائیں کہ صوبے کو گیس کب ملے گی؟‘

انہوں نے کہا کہ ’حماد اظہر کو گیس اور بجلی کا مسائل کا علم ہی نہیں۔‘ وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ’وہ مجھے کابینہ میں بھی مطمئن نہیں کرسکے۔‘اس دوران پرویز خٹک اجلاس سے اٹھ کر چلے گئے، تاہم صحافیوں نے جب ان سے اجلاس میں ہونے والی گرما گرمی اور اجلاس چھوڑ کر باہر جانے سے متعلق سوال کیا تو ان کا کہنا تھا کہ ’میں سگریٹ پینے کے لیے باہر آیا تھا اور میں نے صرف اپنے حق کے لیے آواز بلند کی۔‘

اجلاس کے بعد ایک بار پھر صحافیوں سے بات کرتے ہوئے وزیر دفاع نے کہا کہ ’میں ٹی وی دیکھ کر حیران ہو گیا ہوں کہ آپ نے اتنا بڑا طوفان کھڑا کردیا ہے۔‘’آپ لوگوں نے اتنا بڑا ہنگامہ کھڑا کردیا ہے، میں میڈیا سے کہتا ہوں کہ اس خبر کو روکے، میں سگریٹ پینے کے لیے باہر نکلا تھا۔‘

تحریک انصاف کی پارلیمانی پارٹی کے اجلاس کے بعد وزیراعظم عمران خان نے پرویز خٹک کو اپنے چیمبر میں بلایا اور ملاقات کی۔ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیر دفاع پرویز خٹک کے علاوہ نُور عالم خان اور بعض دیگر ارکان نے بھی اجلاس میں اپنے تحفظات کا اظہار کیا۔

‘Heat heat’ between PM and Pervez Khattak at parliamentary party meeting

The meeting convened to approve the mini-budget of the ruling Pakistan Tehreek-e-Insaf (PTI) parliamentary party allegedly caused chaos when Defense Minister Pervez Khattak raised the issue of gas supply in Khyber Pakhtunkhwa. parliamentary party meeting However, he later told the media that “I am not against Imran Khan, nor can I be against him, Imran Khan is my leader.”

“My question was that gas schemes should work, we have a right to that,” he said. Earlier, government sources confirmed to Urdu News that Pervez Khattak criticized Prime Minister Imran Khan in the meeting and said that we have made him the Prime Minister, gas is banned in Khyber Pakhtunkhwa, we generate gas and electricity and so on. We have been parliamentary party meeting

Pervez Khattak said that if this is your attitude then we will not be able to vote. He then walked out of the meeting, but was later called back by Prime Minister Imran Khan. According to sources, Prime Minister Imran Khan started walking away from the meeting on the talk of Pervez Khattak. “If you are not satisfied with me,

I will give the government to someone else,” he said. parliamentary party meeting The Prime Minister also said that “the government is taking important steps, the problem of gas shortage will be solved soon.” He added that “no additional tax will be imposed which will be a burden on the people.”

At the same time, he said, “I have no factories, I will not be blackmailed by anyone. I am fighting for the country, don’t vote, don’t vote.” Federal Minister for Energy Hamad Azhar and Pervez Khattak also clashed on the occasion. When Hamad Azhar tried to answer Pervez Khattak’s question, the Defense Minister said, “Just tell me when the province will get gas.”

“Hamad Azhar has no knowledge of gas and electricity issues,” he said, criticizing Finance Minister Shaukat Tareen. Pervez Khattak, meanwhile, walked out of the meeting, but when asked by reporters about the heat of the meeting and leaving the meeting, he said, “I came out to smoke and I He only raised his voice for his right.

Speaking to reporters after the meeting, the Defense Minister said, “I am amazed to see on TV that you have created such a big storm.” “You guys have made such a big fuss. I tell the media to stop this news. I went out to smoke.” After the PTI parliamentary party meeting, Prime Minister Imran Khan summoned Pervez Khattak to his chamber and called on him. Sources said that besides Defense Minister Pervez Khattak, Noor Alam Khan and some other members also expressed their reservations in the meeting.

Read More:: The party in the lockdown demanded the resignation of British Prime Minister Boris Johnson

Author: Ayesha KhanI am here! providing you latest News| Technology News |Trending Latest News Updates

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *