The party in the lockdown demanded the resignation of British Prime Minister Boris Johnson

The party in the lockdown demanded

برطانیہ میں لاک ڈاؤن کے دوران 10 ڈاؤننگ سٹریٹ میں ایک پارٹی میں شرکت کے بعد شہریوں نے وزیراعظم بورس جانسن سے استعفیٰ دینے کا مطالبہ کیا ہے۔
فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق پارٹی میں شرکت پر برطانوی وزیراعظم کو پارلیمان میں معافی بھی مانگی پڑی تھی تاہم ان سے استعفے کا مطالبہ کیا جا رہا ہے۔

لاک ڈاؤن میں پارٹی، برطانوی وزیراعظم بورس جانسن سے استعفے کا مطالبہ

پارٹی میں شرکت کرنے کے اعتراف کے بعد اپوزیشن رہنما کیئر سٹارمر اور ان کی اپنی پارٹی کے ارکان نے بھی وزیراعظم بورس جانسن سے استعفیٰ دینے کا مطالبہ کیا تھا۔ یہ پارٹی مئی 2020 میں برطانیہ میں پہلے لاک ڈاؤن کے دوران ڈاؤننگ سٹریٹ کے گارڈن میں ہوئی تھی۔ اس پارٹی میں تقریباً 30 افراد نے شرکت کی تھی۔

ٹور گائیڈ اینٹونی روبنز کا کہنا ہے کہ ’یہ زبردستی کی معافی تھی۔ ایسا لگتا ہے کہ مسٹر بورس جانسن نے ان قواعد و ضوابط کو توڑا جب ہم سب ان کی پابندی کر رہے تھے۔‘
دی گارڈین کے مطابق سکالٹ لینڈ میں کنزرویٹیو پارٹی کے سربراہ ڈگلس راس نے وزیراعظم بورس جانسن سے مستعفی ہونے کا مطالبہ کیا۔

ایک اور شخص نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ ’ان کے لیے ایک اصول اور ہمارے لیے دوسرا اصول۔ اسی نے برطانوی عوام کو غصہ دلایا ہے اور شاید یہ اب بورس جانسن کے لیے فیصلہ کن ثابت ہو۔‘10 ڈاؤننگ سٹریٹ میں ہونے والی تقریبات سے متعلق اسی نوعیت کے الزامات گزشتہ ماہ بھی سامنے آئے تھے جو کرسمس 2020  کے قریب لگنے والے لاک ڈاؤن کے دوران منعقد کی گئی تھیں۔

حکومتی عہدیدار مارٹن رینولڈز نے مئی 2020 میں بھیجی جانے والی ای میل میں لکھا تھا کہ ’انتہائی مصروف عرصے کے بعد اس خوبصورت موسم میں 10 ڈاؤننگ سٹریٹ کے لان میں سماجی فاصلہ رکھتے ہوئے مشروبات کا اہتمام کریں۔‘یہ ای میل ایسے وقت پر بھیجی گئی تھی جب برطانوی شہری اپنے پہلے لاک ڈاؤن سے گزر رہے تھے اور کسی قسم کے آؤٹ ڈور سماجی اجتماع پر پابندی عائد تھی۔

The party in the lockdown demanded the resignation of British Prime Minister Boris Johnson

Citizens have demanded the resignation of Prime Minister Boris Johnson after attending a party at 10 Downing Street during a lockdown in Britain. According to the French news agency AFP, the British Prime Minister had also apologized in the parliament for attending the party, but he is being asked to resign. Opposition leader Carey Starmer and members of his own party have demanded the resignation of Prime Minister Boris Johnson after he admitted to joining the party.

The party took place in Downing Street Gardens in May 2020 during the first lockdown in the UK. About 30 people attended the party. “It was a forced apology,” said tour guide Anthony Robbins. It looks like Mr Boris Johnson broke the rules when we were all following him. “According to The Guardian, Douglas Ross, the leader of the Conservative Party in Scotland, has demanded the resignation of Prime Minister Boris Johnson. The party in the lockdown demanded

“One rule for them and another for us,” said another, speaking on condition of anonymity. That is what has angered the British people, and perhaps it will be decisive for Boris Johnson now. The party in the lockdown demanded “Similar allegations were made last month about the celebrations at 10 Downing Street, which took place during a lockdown near Christmas 2020.

Government official Martin Reynolds wrote in an e-mail sent in May 2020 that “after a very busy time, in this beautiful season, have a drink with a social distance on the lawn at 10 Downing Street.” The e-mail was sent at a time when British citizens were going through their first lockdown and any kind of outdoor social gathering was banned.

Read More:: Pakistan Super League 2022 ticket sales started

Author: Ayesha KhanI am here! providing you latest News| Technology News |Trending Latest News Updates

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *