Pakistan’s Economy: Despite the increase in domestic exports, what could be the negative impact of 100% increase in trade deficit on the economy?

Despite the increase in domestic exports

In a message on social networking site Twitter, Razzaq Dawood, Pakistan’s prime minister’s trade adviser, said that in the first six months of the current financial year, the country’s exports increased by 25% to over 15 billion. Despite the increase in domestic exports The year was 12 billion. On the one hand, the increase in the country’s exports is being hailed as a welcome development in the field of foreign trade.

but on the other hand, the country’s trade deficit has increased by 100% in the first six months of the current financial year Billion dollars. Despite the increase in domestic exports The huge increase in the trade deficit is due to the increase in the country’s imports by more than 60%, which has reached almost ً 40 billion in six months.

Despite the increase in domestic exports The 100 per cent increase in Pakistan’s trade deficit comes at a time when the country is facing immense difficulties difficulties due to the imbalance in external payments and has to rely on external sources to raise money. As Pakistan has a program from the International Monetary Fund (IMF)

As Pakistan has a program from the International Monetary Fund (IMF) which has already created a wave of inflation in the country due to its strict conditions. Despite the increase in domestic exports Under these conditions, fears of further inflation are being raised due to the recent budget presented in the country’s parliament

Foreign trade experts welcome the increase in the country’s exports, commenting on the government’s success, saying that the widening trade deficit is in fact the biggest problem facing government policies and the central government. Despite the steps taken by the bank, it continues to grow and create more difficulties for Pakistan.

Why is the trade deficit rising?

The 100 per cent increase in the trade deficit in the first six months of the current financial year is due to the fact that imports have more than doubled compared to exports. In these six months, if exports increased by 25%, then the increase in imports was 63%. Iqbal Tabish, an expert in the field of international trade,

He said that the increase in imports was due to higher imports of petroleum, automobiles and food items. He said that especially global high prices of petroleum products have increased the country’s imports immensely. He said that although exports have also increased, the increase in imports is huge which is a sign of threat to the country’s foreign trade sector.

Iqbal Tabish said that although the import of raw materials used in domestic exports has also increased the imports, Despite the increase in domestic exports Despite the increase in domestic exports it remains to be seen whether the dollars spent on the import of raw materials in the form of goods produced from these raw materials. Returning to the country or not?

Sana Tawfeeq, an economics and foreign trade expert at Arif Habib Limited, says imports of petroleum products have played a role in increasing the trade deficit, but also imports of machinery. Despite the increase in domestic exports Sana Tawfeeq said that the import of machinery is being called for expansion in the manufacturing sector

but the import of food sector has also increased significantly due to the import of large quantities of wheat and sugar. Sana said that Pakistan used to export these items to the world but now they are imported to meet the domestic demand and to keep the prices stable in the local market which results in trade deficit.

Despite the increase in domestic exports This makes the country’s foreign trade sector and current account deficits unbalanced. According to Sana, the country’s trade deficit has been steadily increasing in the last two years due to high imports and low exports.

Why are exports important?

On why exports are important for a country and what effect it has on the economy, Sana Tawfiq said that there are three ways for a country to attract capital from the outside world. One of them is export,

the products produced in the country should be sold in foreign markets and the capital should be brought into the country The other two sources are foreign direct investment and remittances. Of these three sources, exports are the most important. This is because when there is a surplus of domestically produced products

and they can be exported abroad, on the one hand, there is capital from outside the country, which at that time was brought into the country in the form of global currency dollar. With this, Despite the increase in domestic export.

the productive sector becomes more dynamic and with the increase in the pace of work, the growth rate of the national economy increases and employment opportunities are created for the people. Sana said that when the increase in exports exceeds that of imports, then the balance of trade becomes surplus which is a good thing for the country.

Why isn’t there a big increase in exports?

Pakistan’s trade deficit is widening due to high imports and low exports. Explaining the reason for the absence of any major increase in exports, Sana said that there have been some fundamental problems with the export sector in the country due to which the sector has not been able to perform at the pace at which it can compete with imports.

Despite the increase in domestic exports I would have been more. Similarly, gas and electricity prices also increased the cost of the sector and reduced its competitiveness in the international market. Despite the increase in domestic exports Governance issues also did not allow them to grow much. For example, at first there was a problem of financing facility for them

that the banks did not give them money but then the government launched ‘Temporary Economic Refinancing Facility’ after which the sector got the facility In December, imports began to decline, from 1 billion in December of the current fiscal year compared to December of the previous fiscal year, said Razzaq Dawood, a trade adviser on imports.

He said that the increase of 25 per cent would be known only when more exports of products of different sectors have increased due to increase in their quantity or increase due to depreciation of rupee. Despite the increase in domestic exports Has come to see Talking about the increase in imports,

Iqbal Tabish said that imports have increased significantly due to petroleum, automobiles, cellular phones and food items. He said the trade deficit in six months was 25 25 billion and if calculated, it could be 48 48-50 billion by the end of the year. However, if imports continue to decline, the trade deficit could reach 40 40 billion, which is very alarming for Pakistan’s foreign trade sector.

What will be the negative effects of the growing trade deficit?

Pakistan’s growing trade deficit has put a lot of pressure on the country’s current account, which has reached 7 billion in the first five months of the current financial year. Despite the increase in domestic exports The current account combines exports, remittances, and foreign investment dollars to see where the total dollars earned from them are compared to the dollars

that go abroad in terms of imports and debt repayments. If less dollars are coming and more are going, then it means that the current account of the country is in deficit. If less dollars are coming and more are going, Despite the increase in domestic exports then it means that the current account of the country is in deficit. This year, Pakistan needs 23 23 billion.

in external payments, for which Pakistan has agreed to strict terms for the release of 1 billion tranche from the IMF, Despite the increase in domestic exports which has been followed by the release of other international financial institutions such as Loans from the World Bank and the Asian Development Bank will begin.

Iqbal Tabish said that the current account deficit of the country needs to be controlled at present but due to the huge increase in imports this deficit is increasing. The sharp rise in domestic imports is also putting pressure on the Pakistani rupee, which has risen from Rs 155 to Rs 178 in the first six months of this financial year against the US currency.

Read More:: Gold prices in Pakistan remain unchanged 2022

پاکستان کی معیشت: ملکی برآمدات بڑھنے کے باوجود تجارتی خسارے میں سو فیصد اضافے کے معیشت پر کیا منفی اثرات مرتب ہو سکتے ہیں؟

پاکستان میں وزیر اعظم کے مشیر تجارت رزاق داؤد نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے ایک پیغام میں کہا ہے کہ موجودہ مالی سال کے پہلے چھ مہینوں میں ملکی برآمدات 25 فیصد کی شرح سے بڑھتے ہوئے 15 ارب ڈالر سے تجاوز کر گئیں جو گذشتہ سال 12 ارب ڈالر تھیں۔

ایک جانب ملک کی برآمدات میں اضافے کو بیرونی تجارت کے شعبے میں خوش آئند پیشرفت قرار دیا جا رہا ہے مگر دوسری جانب رواں مالی سال کے پہلے چھ مہینوں میں ملک کا تجارتی خسارہ 100 فیصد بڑھ گیا ہے، ان چھ مہینوں میں تجارتی خسارہ تقریباً 25 ارب ڈالر تک پہنچ گیا ہے۔ تجارتی خسارے میں اس بے تحاشہ اضافے کی وجہ ملکی درآمدات میں ساٹھ فیصد سے زیادہ کا اضافہ ہے جو چھ مہینوں میں تقریباً 40 ارب ڈالر ہو چکا ہے۔

پاکستان کے تجارتی خسارے میں 100 فیصد اضافہ ایک ایسے وقت میں ہوا ہے جب ملک بیرونی ادائیگیوں کے توازن میں بگاڑ کی وجہ سے بے پناہ مشکلات کا شکار ہے اور اس کے باعث رقم کے حصول کے لیے اسے بیرونی ذرائع پر انحصار کرنا پڑ رہا ہے۔

جیسا کہ پاکستان کا بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) سے پروگرام ہے جو اپنی سخت شرائط کی وجہ سے پہلے ہی ملک میں مہنگائی کی لہر کو جنم دے چکا ہے۔ ان شرائط کے تحت حال ہی ملکی پارلیمان میں پیش کیے جانے والے منی بجٹ کے باعث مزید مہنگائی کے خدشات کا اظہار کیا جا رہا ہے۔

بیرونی تجارت کے شعبے کے ماہرین ملکی برآمدات میں اضافے کو تو خوش آئند قرار دیتے ہیں اور حکومت کی جانب سے اسے بڑی کامیابی قرار دینے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ تجارتی خسارے میں اضافہ اصل میں سب سے بڑا مسئلہ ہے جو حکومتی پالییسوں اور مرکزی بینک کی جانب سے لیے جانے والے اقدامات کے باوجود مسلسل بڑھ رہا ہے اور پاکستان کے لیے مزید مشکلات پیدا کر رہا ہے

تجارتی خسارہ کیوں بڑھ رہا ہے؟

موجودہ مالی سال کے پہلے چھ مہینوں میں تجارتی خسارے میں 100 فیصد اضافے کی وجہ برآمدات کے مقابلے میں درآمدات کا دو گنا سے سے بھی زیادہ شرح سے بڑھنا ہے۔ ان چھ مہینوں میں اگر برآمدات میں 25 فیصد اضافہ ہوا تو اس کے مقابلے میں درآمدات میں ہونے والا اضافہ 63 فیصد رہا۔ بین الاقوامی تجارت کے شعبے کے ماہر اقبال تابش کا کہنا ہے کہ درآمدات میں زیادہ اضافہ پیٹرولیم، آٹو موبائل اور کھانے پینے کی اشیا کی زیادہ درآمد کی وجہ سے ہوا ہے۔

انھوں نے کہا خاص کر پیٹرولیم مصنوعات کی عالمی سطح پر زیادہ قیمتوں نے ملکی درآمدات میں بے پناہ اضافہ کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اگرچہ برآمدات میں بھی اضافہ ہوا ہے تاہم درآمدات میں ہونے والا اضافہ بہت زیادہ ہے جو ملک کے بیرونی تجارت کے شعبے کے لیے خطرے کی علامت ہے۔

اقبال تابش نے کہا اگرچہ ملکی برآمدی اشیا میں استعمال ہونے والے خام مال کی درآمد نے بھی درآمدات کو زیادہ بڑھایا ہے تاہم یہ دیکھنا ہو گا کہ کیا خام مال کی درآمد پر خرچ ہونے والے ڈالر اس خام مال سے تیار ہونے والے مال کی صورت میں ملک میں واپس آ رہے ہیں یا نہیں؟

عارف حبیب لمٹیڈ میں معیشت اور بیرونی تجارت کے اُمور کی ماہر ثنا توفیق کا کہنا ہے کہ پیٹرولیم کی مصنوعات کی درآمدات نے تجارتی خسارے کو بڑھانے میں کردار ادا کیا تاہم اس کے ساتھ مشینری کی درآمد کا بھی اس میں ایک بڑا حصہ ہے۔ ثنا توفیق کا کہنا ہے کہ مشینری کی درآمد پیداواری شعبے میں توسیع کے لیے منگوائی جا رہی ہے تاہم فوڈ سیکٹر کی درآمد میں بھی بہت زیادہ اضافہ دیکھا گیا ہے جس کی وجہ گندم اور چینی کی بڑی مقدار میں درآمد ہے۔

ثنا نے بتایا کہ پاکستان کبھی ان چیزوں کو دنیا میں برآمد کرتا تھا تاہم اب ملکی ضرورت کو پورا کرنے کے لیے اور مقامی مارکیٹ میں قیمتوں کو مستحکم رکھنے کے لیے ان کی درآمد کی جاتی ہے جس کا نتیجہ تجارتی خسارے کی صورت میں سامنے آتا ہے۔ یہ ملک کے بیرونی تجارت کے شعبے اور جاری کھاتوں کے خسارے کو عدم توازن سے دوچار کر دیتا ہے۔ ثنا کے مطابق ملک کے تجارتی خسارے میں گذشتہ دو سال میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے جس کی وجہ درآمدات کا زیادہ اور برآمدات کا کم ہونا ہے۔

برآمدات کیوں ضروری ہوتی ہیں؟

کسی ملک کے لیے برآمدات کیوں ضروری ہوتی ہے اور اس سے معیشت پر کیا اثرات مرتب ہوتے ہیں اس کے بارے میں ثنا توفیق نے کہا کہ کسی بھی ملک میں بیرونی دنیا سے سرمایہ لانے کے تین ذرائع ہوتے ہیں۔ان میں ایک برآمدات ہوتی ہیں یعنی ملک کے اندر تیار ہونے والی مصنوعات کو بیرونی منڈیوں پر بیچ کر سرمائے کو ملک میں لایا جائے۔ اس سلسلے میں دوسرے دو ذرائع براہ راست بیرونی سرمایہ کاری اور ترسیلات زر ہوتے ہیں۔ ان تینوں ذرائع میں برآمدات کو زیادہ اہمیت حاصل ہوتی ہے۔ ا

س کی وجہ یہ ہے کہ جب ملک کے اندر تیار ہونے والی مصنوعات سرپلس ہوں اور انھیں بیرونی ملک بھی برآمد کیا جا سکے تو اس سے ایک طرف ملک میں باہر کی دنیا سے سرمایہ جو اس وقت عالمی کرنسی ڈالر کی صورت میں ملک میں لایا جاتا ہے تو اس کے ساتھ اس سے پیداواری شعبہ زیادہ متحرک ہوتا ہے اور اس میں کام کی رفتار بڑھنے سے ملکی معیشت کی شرح نمو بڑھتی ہے اور لوگوں کے لیے روزگار کے مواقع بھی پیدا ہوتے ہیں۔

ثنا نے کہا کہ برآمدات میں اضافہ جب درآمدات سے زیادہ ہو جائے تو اس وقت تجارتی توازن سرپلس ہو جاتا ہے جو ملک کے لیے خوش آئند ہوتا ہے یعنی بیرون ملک جانے والے ڈالروں کے مقابلے میں باہر سے ڈالر زیادہ آ رہے ہیں۔

برآمدات میں بڑا اضافہ کیوں نہیں ہو رہا؟

پاکستان کی درآمدات کے زیادہ اور برآمدات کے کم ہونے کی وجہ سے تجارتی خسارہ بڑھ رہا ہے۔ برآمدات میں کسی بڑے اضافے کے نہ ہونے کی وجہ بیان کرتے ہوئے ثنا نے کہا کہ برآمدی شعبے کے ساتھ ملک میں کچھ بنیادی مسائل رہے ہیں جس کی وجہ سے یہ شعبہ اس رفتار سے اپنی کارکردگی نہیں دکھا سکا جس کی بنیاد پر یہ درآمدات کے مقابلے میں زیادہ ہوتا۔ اسی طرح گیس اور بجلی کی قیمتوں نے بھی اس شعبے کی لاگت میں اضافہ کیا اور اسی کی بین الاقوامی مارکیٹ میں مسابقت کو کم کیا۔

گورننس کے مسائل نے بھی ان کی گروتھ میں زیادہ اضافہ نہیں کرنے دیا۔ مثلاً پہلے ان کے لیے فنانسنگ کی سہولت کا مسئلہ تھا کہ بینک انھیں پیسہ نہیں دیتے تھے تاہم پھر حکومت کی جانب سے ’ٹیمپوریری اکنامک ری فائنانسنگ فیسیلیٹی‘ کا اجرا ہوا جس کے بعد اس شعبے کو سہولت حاصل ہوئی۔ درآمدات کے بارے میں مشیر تجارت رزاق داؤد نے سماجی ویب سائٹ پر کہا کہ دسمبر میں درآمدات میں کمی واقع ہونا شروع ہو گئی ہے جو موجودہ مالی سال کے دسمبر میں گذشتہ مالی سال کے دسمبر کے مقابلے میں ایک ارب ڈالر کی تھیں۔

انھوں نے کہا 25 فیصد ہونے والے اضافے کے بارے میں اس وقت صحیح طور پر پتا چلے گا جب مختلف شعبوں کی مصنوعات کی زیادہ برآمد اس کی تعداد میں زیادہ اضافے کی وجہ سے بڑھی ہیں یا پھر روپے کی قدر میں کمی کی وجہ سے یہ اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔ اقبال تابش نے درآمدات میں اضافے پر بات کرتے ہوئے کہا کہ پیٹرولیم، آٹو موبائل، سیلولر فون اور کھانے پینے کی چیزوں کی وجہ سے درآمدات بہت زیادہ بڑھی ہیں۔

انھوں نے کہا کہ چھ مہینوں میں تجارتی خسارہ 25 ارب ڈالر تھا اور اگر اس حساب سے دیکھا جائے تو یہ سال کے اختتام پر 48 سے 50 ارب ڈالر ہو سکتا ہے۔ تاہم اگر درآمدات میں کمی کا رجحان آیا ہے تو اس حساب سے بھی تجارتی خسارہ 40 ارب ڈالر تک جا سکتا ہے جو پاکستان کے بیرونی تجارت کے شعبے کے لیے بہت الارمنگ ہے۔

بڑھتے تجارتی خسارے کے کیا منفی اثرات مرتب ہوں گے؟

پاکستان کے بڑھتے ہوئے تجارتی خسارے کی وجہ سے ملک کے کرنٹ اکاؤنٹ پر بہت زیادہ دباؤ ہے جو موجودہ مالی سال کے پہلے پانچ ماہ میں سات ارب ڈالر تک جا پہنچا ہے۔ کرنٹ اکاؤنٹ میں برآمدات، ترسیلات زر اور بیرونی سرمایہ کاری کے تحت آنے والے ڈالروں کو اکٹھا کر کے دیکھا جاتا ہے کہ ان سے حاصل ہونے والے مجموعی ڈالر بیرون ملک درآمدات اور قرضے کی ادائیگیوں کی صورت میں جانے والے ڈالروں کے مقابلے میں کہاں کھڑے ہیں۔ اگر کم ڈالر آ رہے ہیں اور زیادہ جا رہے ہیں اور تو اس کا مطلب ہے ملک کا کرنٹ اکاؤنٹ خسارے میں ہیں۔

اس سال پاکستان کو بیرونی ادائیگیوں کے لیے 23 ارب ڈالر کی ضرورت ہے جس کے لیے پاکستان نے آئی ایم ایف سے ایک ارب ڈالر کی قسط کے اجرا کے لیے سخت شرائط پر رضامندی اختیار کی جس کے جاری ہونے کے بعد دوسرے بین الاقوامی مالیاتی اداروں جیسے عالمی بینک اور ایشیائی ترقیاتی بینک سے قرضے کی فراہمی کا سلسلہ شروع ہو گا۔

اقبال تابش نے کہا ملک کے کرنٹ اکاؤنٹ خسارے پر اس وقت قابو پانے کی ضرورت ہے تاہم درآمدات میں بے تحاشا اضافے کی وجہ سے یہ خسارہ بڑھتا چلا جا رہا ہے۔ ملکی درآمدات میں زیادہ اضافہ پاکستانی روپے پر بھی دباؤ ڈال رہا ہے جو امریکی کرنسی کے مقابلے میں اس مالی سال کے پہلے چھ مہینوں میں 155 روپے سے 178 روپے تک جا پہنچا ہے۔

Author: Ayesha KhanI am here! providing you latest News| Technology News |Trending Latest News Updates

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *