More than 18,000 evacuated from Kabul after Taliban takeover

More than 18,000 evacuated from Kabul after Taliban takeover

More than 18,000 evacuated from Kabul after Taliban takeover

A NATO official says more than 18,000 people have been evacuated from Kabul airport since the Taliban took over Afghanistan. According to Reuters news agency, a NATO official said on condition of anonymity that thousands of people had gathered at the airport eager to leave Afghanistan.

Meanwhile, the Taliban has appealed to the imams of mosques to emphasize the unity of the people in the first Friday prayers after they take control of Afghanistan. According to the British news agency Reuters, the directive was issued by the Taliban after protests against the Taliban’s occupation of Afghanistan spread in several cities, including the capital Kabul, on Thursday.

نیٹو کے ایک عہدیدار کا کہنا ہے کہ افغانستان پر طالبان کے قبضے کے بعد سے اب تک 18 ہزار سے زائد افراد کو کابل ایئرپورٹ سے نکالا جا چکا ہے۔

خیال رہے کہ افغانستان کے مختلف شہروں میں ہونے والے بعض مظاہرے چھوٹے تھے لیکن وہاں اس وقت ہزاروں ایسے لوگ موجود ہیں جو مایوس ہیں اور ملک چھوڑ کر جانے کی کوشش کر رہے ہیں جس سے واضح ہوتا ہے کہ طالبان کو گورننس میں کئی طرح کے چیلنج درپیش ہیں۔

روئٹرز کے مطابق طالبان کے ترجمان اس صورت حال پر فوری طور پر تبصرے کے لیے دستیاب نہیں تھے۔

میڈیا کے مطابق بعض دوسری جگہوں پر ہونے والے مظاہروں میں لوگوں کو طالبان کا سفید جھنڈا پھاڑتے ہوئے بھی دیکھا گیا ہے۔

ویڈیو میں ’’ہمارا جھنڈا، ہماری پہچان‘‘ کے نعرے سنے جا سکتے ہیں۔

جس دن افغانستان 1919 میں برطانوی کنٹرول سے اپنی آزادی کا جشن منا رہا تھا، ایک سوشل میڈیا ویڈیو میں کابل میں مردوں اور عورتوں کا ایک ہجوم سیاہ، سرخ اور سبز قومی پرچم لہراتا دکھائی دیتا ہے۔

 ایک اور عینی شاہد نے کابل میں ایک ریلی کے قریب فائرنگ کی اطلاع دی لیکن وہاں طالبان ہوائی فائرنگ کر رہے تھے۔

ایک عینی شاہد نے بتایا کہ مشرقی شہر اسدآباد میں طالبان جنگجوؤں نے ایک ہجوم پر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں متعدد افراد ہلاک ہوگئے۔

برطانوی خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق افغانستان پر طالبان کے قبضے کے خلاف جمعرات کو دارالحکومت کابل سمیت کئی شہروں میں احتجاج پھیل جانے کے بعد طالبان کی جانب سے یہ ہدایت جاری کی گئی ہے۔

 ادھر طالبان نے مساجد کے آئمہ سے اپیل کی ہے کہ وہ ان کے افغانستان کا کنٹرول سنبھالنے کے بعد پہلی نمازِ جمعہ میں لوگوں کے باہمی اتحاد پر زور دیں۔ 

خبر رساں ایجنسی روئٹرز کے مطابق نیٹو کے ایک عہدیدار نے شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ افغانستان سے جانے کے لیے بے تاب ہزاروں افراد ایئرپورٹ پر جمع ہیں۔

An eyewitness said Taliban fighters opened fire on a crowd in the eastern city of Assadabad, killing several people.
Another eyewitness reported firing near a rally in Kabul, but the Taliban were firing in the air.
On the day Afghanistan celebrated its independence from British control in 1919, a social media video showed a crowd of men and women in Kabul waving black, red and green national flags.
Slogans of “Our flag, our identity” can be heard in the video.
According to the media, people have been seen tearing the white flag of the Taliban in some other places.
According to Reuters, Taliban spokesmen were not immediately available for comment.

It is believed that some of the demonstrations in different cities of Afghanistan were small, but there are now thousands of people who are frustrated and trying to leave the country, which shows that the Taliban face many challenges in governance. Are facing

Read more:: More than 2,000 Afghans evacuated from Kabul to UK, hundreds more ready

TAGS Kabul, Assadabad , Taliban fighters , Afghanistan , British news agency Reuters , Taliban’s occupation of Afghanistan , Kabul airport , Taliban spokesmen , evacuated from Kabul,