Digitization: What will be the new trends of 2022 in Pakistan and the world?

What will be the greatest new trends of 2022 in Pakistan

Technology is one of the few fast-changing areas where it is difficult to accurately predict future trends. At the beginning of 2020, the greatest new trends of 2022 in Pakistan no one thought that the technology sector would give up all its work and devote all its energy to creating new tools for work from home and keeping them efficient.

Work From Home became permanent and when it became normal, other sectors re-emerged during 2021, but the focus was still on improving the hybrid working model and digital transformation. the greatest new trends of 2022 in Pakistan Experts expect that the ongoing digital transformation around the world will accelerate.

The amount spent on digital transformation is expected to increase by 20% to 8 1.8 trillion in 2022, according to Statistics platform. the greatest new trends of 2022 in Pakistan Against this backdrop, those who keep an eye on future trends expect new innovations in the areas of Met avers, Artificial Intelligence, Web Three Point Zero, Promotion of Corrupt Currency, NFT.

Pakistan’s trends

The nature of affairs in Pakistan is slightly different from the global trends in digital media. Excluding government announcements and revenue from the IT sector, e-commerce seems to be the only sector where significant progress has been made. the greatest new trends of 2022 in Pakistan.


Talking to Urdu News, digital strategist Shehryar Popalzai said that start-ups have emerged in the fields of education and e-commerce, some have even succeeded in securing funds from global investors. the greatest new trends of 2022 in Pakistan It is hoped that the situation will improve if fundamental reforms are made.

New media trends

When news media in Pakistan transformed itself into digital, it was expected that independent content producers, along with traditional media houses, would attract new users when producing content, but the recent practice and audience interest Explains that there is still some shortcoming. According to Shehryar Popalzai, New Media is more focused on breaking like its predecessor print and broadcast media.

In the past, TRP was considered a measure of success, but now it has the status of page views and visitors, but data from websites shows that a large number of audiences are still far from them. According to Pakistani digital media strategists, the growth of vloggers and youtubers was expected to bring some changes in content offerings but they are also limited to views. It is feared that the same thing will happen to New Media as it has to television and print.

According to Shehryar Popalzai, the new audience will be attracted only when the need is made the basis of news instead of breaking and editorial or user choice. Instead of being limited to breaking news, focus on follow-up and investigative news may affect views for a while, but that’s the way to attract a new audience.

Expecting further improvements in e-commerce and related fields, Shehryar Popalzai says the new startups have focused on providing products or services based on where they have received funding. If these trends continue, the results will be even better. Emphasizing the importance of infrastructure as well as Internet access and the growth of smart devices, he said that fundamental reforms are needed at the governmental and private levels. Pay attention

Banking

Following the steps taken by the SBP towards branchless banking with a view to digital banking, Pakistan’s banking system is expected to grow significantly in 2022. According to the Central Bank of Pakistan, the greatest new trends of 2022 in Pakistan every bank will now provide the facility to the customer to open an account and verify biometrics without visiting the branch.

Global Digital Media Trends

Putting aside the possibilities and concerns related to news or new media, e-commerce, banking etc. in Pakistan, if we look at the global trends, the situation is slightly different. the greatest new trends of 2022 in Pakistan Companies are focusing on new mediums in search of new audience segments. Broadcasting television was replaced by Connected TV, and streaming of content through apps on smart TVs or over-the-top devices took the form of Connected Television

According to a survey by the International Advertising Bureau, those involved in marketing say they have shifted 60 percent of their advertising budget to Connected TV in 2021, instead of broadcasting television. Chris Poquet of Deep Intent says he still finds the money low. In 2022, both business and consumers will try to make the most of Connected TV.

Web Three Point Zero

Web Three Point O or Three Point Zero is the new version of the current Web Two Point Zero or the third version of the Internet. While technology enthusiasts see this as a new revolution in technology in 2022, there are those who see it as a long way off. In the current era of web-to-point zero, before the new concept of decentralized web, the Internet has become more social than ever before, giving consumers the opportunity to better communicate.

During these interactions, where a large amount of content was created, new types of data also emerged. So far, the data has been controlled by companies such as Amazon, Apple, Meta, Microsoft and Google. The growing control of these entities, where privacy concerns have arisen and consumers have had problems with their personal, business and financial data, has forced them to use these services, whether they like it or not. There are a number of conditions that must be met in order to sign an agreement.

Despite concerns from users, social media platforms have tightened the conditions for content creation and retention on their platforms. While this process has raised concerns about free speech, it has also created new controversies. What will be the greatest new trends of 2022 in Pakistan Against this backdrop, people in the technology sector expect that the more decentralized web in the form of Web Three Point Zero will provide better services to the user rather than the institution. It will also improve data security and privacy issues.

Behind many cryptocurrencies and non-flammable tokens (NFTs) there is also the blockchain technology behind Web Three Point Zero. While its growth may reduce the control of Internet users’ data over large technology companies, the removal of middlemen or intermediaries is expected to strengthen the link between consumer and business.

The future of cryptocurrency

Talking about global trends in digital media, Tom Merritt of Tech Republic sees digital or crypto currency being officially accepted in 2022.the greatest new trends of 2022 in Pakistan According to him, so far there has been little focus on crypto currency at the government level or by central banks. the greatest new trends of 2022 in Pakistan Nevertheless, with the advent of digital currency, it is expected that governments of different countries and their central banks will introduce their own corrupt currency.

Met avers

A few days ago, when American actress Paris Hilton announced the launch of Met avers business, it was still a relatively strange idea for many people. the greatest new trends of 2022 in Pakistan Met averse is said to be a network of 3D virtual worlds that will serve to create new social connections for consumers as well as new opportunities for brands and consumers,

a concept that still exists in theory or early form. Paris Hilton created an island in the virtual world on New Year’s Eve, where she not only provided entertainment opportunities by working as a DJ, but also added benefits to those who turned to this meteorological property. Digital copies of his luxurious home on Beverly Hills, a virtual ocean cruise, a luxury sports car drive and many more.

With the increasing focus on digitalization, it is expected that in 2022, the greatest new trends of 2022 in Pakistan the term will move beyond theory to become so practical that various organizations will try to make Metalwork a reality in the Internet world through headsets based on virtual and augmented reality. Will appear to be claiming. the greatest new trends of 2022 in Pakistan

Changing style of work in offices

According to Gartner, a US technology research and consulting firm, digital technology projects are a priority for organizations that determine the future of their work. While various public and private entities are seeking to protect themselves from third-party dependence, they are also struggling with the growing hybrid working model. Shaheen Yazdani, co-founder of the Canadian company Inters pot, expects work to continue to make hybrid working more efficient.

While the focus will be on modernizing the workplace, a large number of people will still be working on hybrid work, despite the return to offices from the work provider home. the greatest new trends of 2022 in Pakistan New technologies and tools are expected to emerge as part of the workforce is present in offices and other homes.

Moving on to Shaheen Yazdani’s talk, Joel Jensen of Intel Corporation says that while artificial intelligence, the Internet of Things and automation will increase its presence to reduce manpower, automated kiosks in the retail and hospitality sectors. Lack of human intervention in order fulfillment and drive-drives based on artificial intelligence will be more popular.

Growing data issues

Thousands of terabytes of data generated on a daily basis are creating a new problem where increasing access to the Internet has created facilities. It is becoming increasingly difficult to come to an accurate conclusion by reviewing this data or to provide actionable insights for data-based decisions. Experts expect that in 2022, the platforms that will review the data and present it in a simple way will deserve more attention. the greatest new trends of 2022 in Pakistan

Hackers access to artificial intelligence

According to Ann Petersen of Plurlock Security Inc., artificial intelligence has so far been in the hands of digital media makers, What will be the greatest new trends of 2022 in Pakistan but now that it has fallen into the hands of hackers, it could create problems for the Internet and its users. the greatest new trends of 2022 in Pakistan

New style of search engine optimization

Bernadette Nixon, CEO of San Francisco-based Algolia, expects new practices to be adopted in the world of search engine optimization. Although the changes made by the search engines from time to time have been clearly announced, most of the companies around the world are still using the basic technology of 2010. According to content optimization experts, despite the new changes, those who use the old strategy for content optimization will now have to adopt new practices with consumers in mind.

Lack of technically competent workforce

David Moyes of Decide Consulting fears that after a slight improvement in the epidemic situation, companies will now face a shortage of people with technical skills. the greatest new trends of 2022 in Pakistan He says that where a large number of jobs were lost during the epidemic, the greatest new trends of 2022 in Pakistan now that the situation has improved, companies will want to hire people with technical skills to enhance their capabilities. There will be a shortage of talented people.

Improved moderation and Omni channel customer support

Thomas Griffin of Upton Monster says that due to changing trends, users will not be satisfied with the option of chat on the website. the greatest new trends of 2022 in Pakistan Consumers are not satisfied with the facilities that are currently being provided by the websites for the consumers to interact with the brands. According to Thomas Griffin, with the increasing use of social media, users now want to reach out to different brands of pages and gain a better understanding of the product and service, so the Omni-channel customer support is expected to increase in 2022.

Read More:: Selling vegetables does not increase country’s wealth: Imran Khan

ڈیجیٹلائزیشن: پاکستان اور دنیا میں 2022 کے نئے ٹرینڈز کیا رہیں گے؟

ٹیکنالوجی تیزی سے تبدیل ہونے والے ان چند شعبوں میں سے ہے جہاں مستقبل کے ٹرینڈز کا صحیح اندازہ قائم کرنا دشوار ہوتا ہے۔ 2020 کی ابتدا میں کسی نے نہیں سوچا تھا کہ ٹیکنالوجی کا شعبہ سارے کام چھوڑ کر اپنی پوری توانائی ورک فرام ہوم کے لیے نئے ٹولز بنانے اور انہیں موثر رکھنے پر لگا دے گا۔

ورک فرام ہوم نے مستقل حیثیت اختیار کی اور یہ نیونارمل ٹھہرا تو 2021 کے دوران دیگر شعبے ایک مرتبہ پھر سامنے آئے لیکن سب سے زیادہ توجہ اب بھی ہائبرڈ ورکنگ ماڈل کو بہتر بنانے اور ڈیجیٹل ٹرانسفارمیشن پر رہی۔
ماہرین کو توقع ہے کہ دنیا بھر میں جاری ڈیجیٹل ٹرانسفارمیشن کا یہ سلسلہ مزید تیزی اختیار کرے گا۔

اعدادوشمار سے متعلق پلیٹ فارم سٹیٹسٹا کے مطابق 2022 میں ڈیجیٹل ٹرانسفارمیشن پر خرچ ہونے والی رقم 20 فیصد بڑھ کر 1.8 ٹریلین ڈالر ہونے کی توقع ہے۔اسی پس منظر میں مستقبل کے ٹرینڈز پر نظر رکھنے والوں کو توقع ہے کہ میٹاورس، مصنوعی ذہانت، ویب تھری پوائنٹ زیرو، کرپٹو کرنسی کا فروغ، این ایف ٹی کے شعبوں میں نئی جدتیں سامنے آئیں گی۔

پاکستان کے ٹرینڈز

ڈیجیٹل میڈیا کے عالمی ٹرینڈز سے قطع نظر پاکستان میں معاملات کی نوعیت قدرے مختلف ہے۔ حکومتی اعلانات اور آئی ٹی کے شعبے سے ہونے والی آمدن کو نظرانداز کیا جائے تو صرف ای کامرس ہی ایسا شعبہ دکھائی دیتا ہے جہاں قابل ذکر پیش رفت ہوئی ہے۔ اردو نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے ڈیجیٹل سٹریٹیجسٹ شہریار پوپلزئی کا کہنا ہے کہ تعلیم اور ای کامرس کے شعبوں میں سٹارٹ اپس سامنے آئے، کچھ نے عالمی انویسٹرز سے فنڈز حاصل کرنے میں بھی کامیابی حاصل کی ہے۔ توقع ہے کہ بنیادی اصلاحات ہو جائیں تو معاملہ بہتر ہو سکتا ہے۔

میڈیا کے نئے ٹرینڈز

پاکستان میں نیوز میڈیا نے خود کو ڈیجیٹل میں تبدیل کیا تو توقع تھی کہ روایتی میڈیا ہاؤسز کے ساتھ انڈی پینڈنٹ کنٹینٹ پروڈیوسرز جب مواد تیار کریں گے تو یہ نئے صارفین کو اپنی جانب متوجہ کرے گا، تاہم گزشتہ کچھ عرصے کی پریکٹسز اور آڈینس کی دلچسپی بتاتی ہے کہ کہیں کچھ کمی باقی ہے۔ شہریار پوپلزئی کے مطابق نیو میڈیا اپنے پیشرو پرنٹ اور براڈکاسٹنگ میڈیا کی طرح بریکنگ پر زیادہ فوکسڈ ہے۔ ماضی میں ٹی آر پی کو کامیابی کا پیمانہ مانا جاتا تھا تو اب یہ درجہ پیج ویوز اور وزیٹرز کو حاصل ہے، لیکن ویب سائٹس کا ڈیٹا بتاتا ہے کہ آڈینس کی بڑی تعداد اب بھی ان سے دور ہے۔

پاکستانی ڈیجیٹل میڈیا سٹریٹجسٹ کے مطابق وی لاگرز اور یوٹیوبرز کے بڑھنے سے توقع تھی کہ کنٹینٹ کی پیشکش میں کچھ تبدیلی آئے لیکن وہ بھی ویوز تک ہی محدود ہیں۔ ایسے میں خدشہ ہے کہ نیو میڈیا کے ساتھ بھی وہی کچھ ہو گا جو ٹیلی ویژن اور پرنٹ کے ساتھ ہوا ہے۔ شہریار پوپلزئی کے مطابق نیا آڈینس تبھی متوجہ ہو گا جب بریکنگ اور ادارتی یا صارف کی پسند کے بجائے ضرورت کو خبر کی بنیاد بنایا جائے۔ بریکنگ خبر تک محدود رہنے کے بجائے فالواپس اور تحقیقاتی خبر پر توجہ رکھی جائے تو شاید ویوز کچھ عرصے کے لیے متاثر ہوں لیکن نئے آڈینس کو راغب کرنے کا راستہ یہی ہے۔

ای کامرس اور اس سے متعلق شعبوں میں مزید بہتری کی توقع ظاہر کرتے ہوئے شہریار پوپلزئی کہتے ہیں کہ نئے سٹارٹ اپس نے جہاں فنڈز حاصل کیے ہیں وہیں ضرورت کی بنیاد پر پراڈکٹس یا سروس فراہم کرنے پر فوکس کیا ہے۔ یہ ٹرینڈز برقرار رہا تو نتائج مزید بہتر رہیں گے۔انفراسٹرکچر کے ساتھ ساتھ انٹرنیٹ کی رسائی، سمارٹ ڈیوائسز میں اضافے کو اہم قرار دیتے ہوئے ان کا کہنا ہے کہ حکومتی اور نجی سطح پر بنیادی اصلاح ضروری ہے، عالمی ٹرینڈز یا بزورڈز کو فالو کرنا تب مفید رہے گا جب بنیاد ٹھیک اور طویل المدت اہداف پر توجہ رہے۔

بینکنگ

سٹیٹ بینک کی جانب سے ڈیجیٹل بینکنگ کو مدنظر رکھتے ہوئے برانچ لیس بینکنگ کے حوالے سے کیے گئے اقدامات کے بعد توقع ہے کہ 2022 میں پاکستان کا بینکاری نظام صارفین میں خاطرخواہ اضافہ کرے گا۔پاکستان کے مرکزی بینک کے مطابق ہر بینک اب صارف کو یہ سہولت دے گا کہ وہ برانچ آئے بغیر اکاؤنٹ کھلوا اور بائیومیٹرک تصدیق کر سکے۔

ڈیجیٹل میڈیا کے عالمی ٹرینڈز

پاکستان میں نیوز یا نیو میڈیا، ای کامرس، بینکاری وغیرہ سے متعلق امکانات و خدشات ایک طرف رکھ کرعالمی ٹرینڈز کا جائزہ لیں تو صورتحال قدرے مختلف ہے۔ آڈینس کے نئے سیگمنٹس کی تلاش میں ادارے اپنی توجہ نئے میڈیمز پر مبذول کر رہے ہیں۔

براڈکاسٹنگ ٹیلی ویژن کی جگہ کنیکٹڈ ٹی وی نے لی تو سمارٹ ٹی وی یا اوور دی ٹاپ ڈیوائسز پر ایپس کے ذریعے کنٹینٹ کی سٹریمنگ نے کنیکٹڈ ٹیلی ویژن کی شکل اختیار کر لی۔ انٹرنیشنل ایڈورٹائزنگ بیورو کے ایک سروے میں مارکیٹنگ سے وابستہ افراد نے کہا کہ وہ اشتہارات کے بجٹ کا 60 فیصد براڈکاسٹنگ ٹیلی ویژن کے بجائے 2021 میں کنیکٹڈ ٹی وی کی طرف منتقل کر چکے ہیں۔ڈیپ انٹینٹ کے کرس پکوئٹ کہتے ہیں کہ انہیں یہ رقم اب بھی کم لگتی ہے، 2022 میں کنیکٹڈ ٹی وی کے ذریعے بزنس اور صارف دونوں زیادہ مستفید ہونے کی کوشش کریں گے۔

ویب تھری پوائنٹ زیرو

ویب تھری پوائنٹ او یا تھری پوائنٹ زیرو، موجودہ ویب ٹو پوائنٹ زیرو کا نیا یا انٹرنیٹ کا تیسرا ورژن کہلاتا ہے۔ ٹیکنالوجی سے وابستہ افراد جہاں اسے 2022 میں ٹیکنالوجی کے شعبے میں نئے انقلاب کے طور پر دیکھ رہے ہیں وہیں کچھ ایسے بھی ہیں جنہیں یہ منزل ابھی کچھ دور لگتی ہے۔

ڈی سینٹرلائزڈ ویب کے نئے تصور سے قبل ویب ٹو پوائنٹ زیرو کے موجودہ دور میں انٹرنیٹ ماضی کی نسبت زیادہ سوشل ہوا، صارفین کو موقع ملا کہ وہ زیادہ بہتر طریقے سے باہم مربوط رہیں۔ ان رابطوں کے دوران جہاں بڑی مقدار میں کنٹینٹ تخلیق ہوا وہیں ڈیٹا کی نئی اقسام بھی سامنے آئیں۔ اب تک یہ ڈیٹا امیزون، ایپل، میٹا، مائکروسافٹ اور گوگل جیسے اداروں کے کنٹرول میں ہے

ان اداروں کا کنٹرول بڑھنے سے جہاں پرائیویسی سے متعلق خدشات پیدا ہوئے اور صارفین کو اپنے ذاتی، کاروباری اور فنانشل ڈیٹا سے متعلق مسائل کا سامنا کرنا پڑا، وہیں ان کی یہ مجبوری برقرار ہے کہ وہ پسند کریں یا ناپسند، انہیں ان سروسز کا استعمال کرنے کے لیے جو ایگریمنٹ سائن کرنا ہوتا ہے اس میں ہر طرح کی شرائط ماننا پڑتی ہیں۔

صارفین کی جانب سے خدشات کے اظہار کے باوجود سوشل میڈیا پلیٹ فارمز نے کنٹینٹ کی تیاری اور اسے اپنے پلیٹ فارمز پر باقی رکھنے کی شرائط مزید سخت کی ہیں۔ اس عمل سے جہاں فری سپیچ سے متعلق خدشات سامنے آئے وہیں نئے تنازعات بھی پیدا ہوئے ہیں۔

اس پس منظر میں ٹیکنالوجی کے شعبے سے وابستہ افراد کو توقع ہے کہ ویب تھری پوائنٹ زیرو کی صورت مزید ڈی سینٹرلائزڈ ویب، اداروں کے بجائے صارف کو زیادہ بہتر خدمات مہیا کرے گی۔ اس سے ڈیٹا سکیورٹی اور پرائیویسی کے معاملات بھی بہتر رہیں گے۔

بہت سی کرپٹو کرنسیوں اور نان فنجیبل ٹوکنز (این ایف ٹیز) کے پس پردہ موجود بلاک چین ٹیکنالوجی ویب تھری پوائنٹ زیرو کے پس پردہ بھی موجود ہے۔ اس کے فروغ پانے سے جہاں انٹرنیٹ صارفین کے ڈیٹا پر بڑے ٹیکنالوجی اداروں کا کنٹرول کم ہو سکتا ہے وہیں مڈل مین یا درمیانی واسطوں کے ہٹ جانے سے صارف اور بزنس کا رابطہ بھی زیادہ مضبوط ہونے کی توقع ہے۔

کرپٹوکرنسی کا مستقبل

ڈیجیٹل میڈیا میں عالمی ٹرینڈز سے متعلق بات کرتے ہوئے ٹیک ریپبلک کے ٹام میرٹ 2022 میں ڈیجیٹل یا کرپٹو کرنسی کو سرکاری سطح پر قبول ہوتا دیکھتے ہیں۔ ان کے مطابق اب تک حکومتی سطح یا مرکزی بینکوں کی جانب سے کرپٹوکرنسی پر کم توجہ رہی ہے۔ اس کے باوجود ڈیجیٹل کرنسی کے مقبول ہونے کے بعد توقع ہے کہ مختلف ملکوں کی حکومتیں اور ان کی مرکزی بینک اپنی کرپٹو کرنسی متعارف کرائیں گے۔

میٹاورس

چند روز قبل امریکی اداکارہ پیرس ہلٹن نے میٹاورس بزنس شروع کرنے کا اعلان کیا تو اب بھی بہت سے لوگوں کے لیے یہ نسبتا اجنبی سا تصور تھا۔میٹاورس کو تھری ڈی ورچویل دنیاؤں کا ایسا نیٹ ورک کہا جاتا ہے جو برانڈ اور صارف کے لیے نئے مواقع کے ساتھ ساتھ صارفین میں نئے سوشل کنکشن بنانے کے کام آئے گا، یہ تصور اب تک تھیوری یا ابتدائی شکل میں ہی موجود ہے۔

پیرس ہلٹن نے نئے سال کے موقع پر ورچوئل ورلڈ میں ایک ایسا جزیرہ بنایا جہاں انہوں نے ڈی جے کے طور پر کام کر کے ناصرف انٹرٹینمنٹ کے مواقع مہیا کیے بلکہ اس میٹاورس پراپرٹی کا رخ کرنے والوں کو مزید فوائد بھی ملے۔ بیورلی ہلز پر واقع ان کے پرتعیش گھر کی ڈیجیٹل نقول، ورچوئل سمندر کی سیر، لگژری سپورٹس کار کی ڈرائیو سمیت بہت سے پرلطف لمحات میسر آئے۔

ڈیجیٹلائزیشن پر توجہ بڑھنے سے توقع ہے کہ 2022 میں یہ لفظ تھیوری سے باہر نکل کر اتنی سی عملی شکل اختیار کرسکے گا کہ مختلف ادارے ورچوئل اور آگمینٹڈ ریالٹی پر مبنی ہیڈسیٹس کے ذریعے انٹرنیٹ کی دنیا میں میٹاورس کو سچ کرنے کی کوشش کرتے یا اس کا دعوی کرتے دکھائی دیں گے۔

دفاتر میں کام کے بدلتے انداز

امریکہ کی ٹیکنالوجی ریسرچ اور کنسلٹنگ کمپنی گارٹنر کے مطابق اداروں کے لیے ان کے کام کے مستقبل کا تعین کرنے والی ڈیجیٹل ٹیکنالوجی سے متعلق منصوبے ترجیح ہیں۔ مختلف سرکاری ونجی ادارے جہاں خود کو تھرڈ پارٹی پر انحصار سے بچانا چاہ رہے ہیں وہیں تیزی سے بڑھتے ہوئے ہائبرڈ ورکنگ ماڈل کی مشکلات سے بھی نمٹ رہے ہیں۔

کینیڈین کمپنی انٹرسپٹ کی شریک بانی شاہین یزدانی کو توقع ہے کہ ہائبرڈ ورکنگ کو مزید موثر بنانے کے لیے کام جاری رہے گا۔ اس دوران جہاں ورک پلیس کو جدید بنانے پر توجہ ہو گی وہیں ورک فراہم ہوم سے آفسز کو واپسی کے باوجود ماضی کی نسبت بڑی تعداد اب بھی ہائبرڈ ورکنگ پر رہے گی۔ کام کرنے والوں کا کچھ حصہ دفاتر اور باقی گھروں پر موجود رہنے کی وجہ سے نئی ٹیکنالوجیز اور ٹولز کا سامنے آنا متوقع ہے۔

شاہین یزدانی کی گفتگو کے رخ پر آگے بڑھتے ہوئے انٹیل کارپوریشن کے جو جینسن کہتے ہیں کہ جہاں افرادی قوت کی کمی کے لیے مصنوعی ذہانت، انٹرنیٹ آف تھنگز اور آٹومیشن اپنی موجودگی میں اضافہ کریں گے وہیں ریٹیل اور مہمان نوازی سے متعلق شعبوں میں خودکار کیوسک، آرڈر پورا ہونے میں انسانی مداخلت کی کمی اور مصنوعی ذہانت پر چلتے ڈرائیو تھرو زیادہ مقبول رہیں گے۔

بڑھتے ڈیٹا کے مسائل

انٹرنیٹ کی رسائی بڑھنے نے جہاں سہولیات پیدا کی ہیں وہ روزانہ کی بنیاد پر پیدا ہونے والا ہزاروں ٹیرابائٹ ڈیٹا ایک نئی مشکل پیدا کر رہا ہے۔ اس ڈیٹا کا جائزہ لے کر کسی درست نتیجے تک پہنچنا یا ڈیٹا کی بنیاد پر فیصلوں کے لیے ایکشن ایبل انسائٹ مہیا کرنا مشکل سے مشکل تر ہوتا جا رہا ہے۔ ماہرین کو توقع ہے کہ 2022 میں جو پلیٹ فارم ڈیٹا کا جائزہ لے کر اسے آسان انداز میں پیش کریں گے وہ زیادہ توجہ کے مستحق ٹھہریں گے۔

ہیکرز کی مصنوعی ذہانت تک رسائی

پلوریلاک سکیورٹی انکارپوریشن کے این پیٹرسن کے مطابق مصنوعی ذہانت اب تک ڈیجیٹل میڈیا کو بنانے والوں کے ہاتھ میں رہی ہے لیکن اب یہ ہیکرز کے ہاتھ پہنچنے کے بعد انٹرنیٹ اور اس کے صارفین کے لیے مسائل پیدا کر سکتی ہے۔


سرچ انجن آپٹیمائزیشن کا نیا انداز

سان فرانسسکو کے ادارے الگولیا کی سی ای او برناڈیٹ نکسن کو توقع ہے کہ سرچ انجن آپٹیمائزیشن کی دنیا میں اب نئی پریکٹسز اختیار کی جا سکتی ہیں۔ اگرچہ سرچ انجنز کی جانب سے وقتا فوقتا کی گئی تبدیلیوں کا واضح اعلان کیا جاتا رہا ہے لیکن دنیا بھر میں اب تک زیادہ تر ادارے 2010 کی بنیادی تکنیک کو ہی استعمال کر رہے ہیں۔ کنٹینٹ آپٹیمائزیشن سے متعلق ماہرین کے مطابق نئی تبدیلیوں کے باوجود کنٹینٹ کی آپٹیمائزیشن کے لیے پرانی حکمت عملی کا استعمال کرنے والوں کو اب صارفین کو مدنظر رکھ کر نئی پریکٹسز اپنانا ہوں گی۔

تکنیکی صلاحیت رکھنے والی ورک فورس کی قلت

ڈیسائیڈ کنسلٹنگ سے وابستہ ڈیوڈ موئس کو خدشہ ہے کہ وبائی صورتحال میں قدرے بہتری کے بعد اب اداروں کو ٹیکنیکل سکلز رکھنے والوں کی کمی کا سامنا رہے گا۔ وہ کہتے ہیں کہ وبا کے دوران جہاں بڑی تعداد ملازمتوں وغیرہ سے الگ ہوئی، اب صورتحال بہتر ہونے کے بعد ادارے اپنی استعداد بڑھانے کے لیے تکنیکی سکلز رکھنے والوں کو اپنا حصہ بنانا چاہیں گے، اتنی بڑی ڈیمانڈ پیدا ہونے سے مارکیٹ میں موجود اعلی تکنیکی صلاحیتوں کے حامل افراد کی قلت کا خدشہ رہے گا۔

بہتر موڈریشن اور اومنی چینل کسٹمر سپورٹ

آپٹن مانسٹر کے تھامس گریفن کہتے ہیں کہ بدلتے ٹرینڈز کی وجہ سے صارفین کو ویب سائٹ پر چیٹ کا آپشن دے کر مطمئن نہیں رکھا جا سکے گا۔اس وقت ویب سائٹس کی جانب سے صارفین کو برانڈز سے رابطے کے لیے جو سہولتیں دی جا رہی ہیں، کنزیومر ان سے مطمئن نہیں ہے۔ تھامس گریفن کے مطابق سوشل میڈیا کا استعمال بڑھنے سے اب صارف مختلف برانڈز کے پیجز تک پہنچ کر پراڈکٹ اور سروس سے متعلق زیادہ بہتر سمجھ بوجھ حاصل کرنے کا خواہشمند ہے، اس لیے 2022 میں ’اومنی چینل کسٹمر سپورٹ‘ مییں اضافے کی توقع ہے۔

Author: Ayesha KhanI am here! providing you latest News| Technology News |Trending Latest News Updates

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *