Selling vegetables does not increase country’s wealth: Imran Khan

Selling vegetables does not increase country’s wealth :Imran Khan

The Prime Minister of Pakistan Imran Khan has said that the economy is created by increasing exports and industrial development while we are selling agricultural commodities and vegetables, thus the country does not become rich. Addressing the inauguration ceremony of the Pak-China Business Investment Forum in Islamabad on Monday, Selling vegetables does not increase country’s wealth the Prime Minister welcomed the forum and said that it was an important step.

Addressing the Chinese investors present at the event, he said, “We need your feedback on the difficulties that may arise.”
According to Imran Khan, the regulations are causing delays. Using the English phrase ‘time from money’ to emphasize the importance of time, he said that the more time is wasted, especially in business, the greater the loss. Selling vegetables does not increase country’s wealth

Imran Khan said that the greatest emphasis was being laid on how to provide maximum facility to the investors. Referring to the 60’s, the Prime Minister said that the industry was developing rapidly in the country at that time. “Unfortunately, this has not been addressed since then.” Stressing on the importance of exports, Imran Khan said that how can a country which does not export move forward.

The Prime Minister said that no attention was paid to the IT sector in the past. According to him, there has been an improvement after the concessions given by our government. Calling China’s neighborhood an advantage,Selling vegetables does not increase country’s wealth Imran Khan said it was a fast-growing economy. “We have had a relationship with him for 70 years and he is ready to help us.”

Read More:: Today Silver price In Pakistan On 1 January 2022

سبزیاں بیچنے سے ملک کی دولت نہیں بڑھتی: عمران خان

پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ معیشت برآمدات بڑھانے اور صنعتی ترقی سے ہوتی ہے جبکہ ہم زرعی اشیا اور سبزیاں بیچ رہے ہیں، اس طرح تو ملک کی دولت نہیں بنتی۔ سوموار کو اسلام آباد میں پاک چائنہ بزنس انویسٹمنٹ فورم کے قیام کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے فورم کو خوش آئند قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ ایک اہم قدم ہے۔

انہوں نے تقریب میں موجود چینی سرمایہ کاروں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں آپ سے فیڈ بیک چاہیے، کہ کیسی مشکلات آتی ہیں۔ عمران خان کے مطابق جن ریگولیشنز کی وجہ سے دیر ہوتی ہے ان کو ختم کر رہے ہیں۔ نہوں نے وقت کی اہمیت اجاگر کرنے کے لیے انگریزی کا محاورہ ’ٹائم از منی‘ استعمال کرتے ہوئے کہا کہ خاص طور پر بزنس میں جتنا وقت ضائع ہوتا ہے نقصان اتنا ہی زیادہ ہوتا ہے۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ سب سے زیادہ زور اس بات پر دیا جا رہا ہے کہ سرمایہ کاروں کو زیادہ سے زیادہ سہولت کیسے فراہم کی جا سکتی ہے۔

وزیراعظم نے ایک بار پھر 60 کی دہائی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اس وقت ملک میں صعنت تیزی سے ترقی کر رہی تھی۔ ’بدقسمتی سے اس کے بعد اس جانب توجہ نہیں دی گئی۔‘ عمران خان نے برآمدات کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ جو ملک ایکسپورٹ نہیں کرتا وہ آگے کیسے بڑھ سکتا ہے۔ عمران خان نے برآمدات کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ جو ملک ایکسپورٹ نہیں کرتا وہ آگے کیسے بڑھ سکتا ہے۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ آئی ٹی کے شعبے پر بھی ماضی میں توجہ نہیں دی گئی۔ ان کے مطابق ہماری حکومت کی جانب سے دیے جانے مراعات کے بعد بہتری آئی ہے۔ عمران خان نے چین کی ہمسائیگی کو ایڈوانٹیج قرار دیتے ہوئے کہا کہ وہ تیزی سے آگے بڑھتی معیشت ہے۔ ’ہمارے اس کے ساتھ 70 سال سے تعلقات ہیں اور ہماری مدد کے لیے بھی تیار ہے۔‘

Author: Ayesha KhanI am here! providing you latest News| Technology News |Trending Latest News Updates