security will definitely be affected

اسلام آباد میں قومی سلامتی کی اجرا کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ بڑی محنت سے قومی متفقہ دستاویز تیار کی ہے۔جمعے کو پاکستان کی وفاقی حکومت نے پہلی قومی پالیسی کا پبلک ورژن جاری کر دیا ہے۔ تقریب میں وزیراعظم سمیت سول اور اعلیٰ فوجی حکام بھی شریک تھے۔

معیشت کی سمت درست نہیں تو سکیورٹی ضرور متاثر ہو گی: عمران خان

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ’سکیورٹی کی متعدد جہتیں ہیں۔ آپ نے جو پالیسی دی ہے، آپ نے قوم کا قبلہ درست کر دیا ہے۔ اگر آپ کی میعشت کی سمت درست نہیں تو پھر آپ کی سیکورٹی ضرور متاثر ہو گی۔‘وزیراعظم نے اپنے خطاب میں کہا کہ ’جب آپ کو بار بار آئی ایم ایف کے پاس جانا پڑتا ہے تو اس کا مطلب ہے کہ آپ کو کہیں نہ کہیں اپنی سکیورٹی پر سمجھوتا کرنا پڑتا ہے۔‘

قومی سکیورٹی پالیسی کے بارے میں وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ ہمارے ہاں کبھی بھی مربوط قومی سکیورٹی پالیسی نہیں بنائی گئی۔’آپ کی سب سے بڑی سیکورٹی وہ ہوتی ہے ک جب آپ کے عوام آپ کے ساتھ کھڑے ہو جائیں اور سب سمجھیں کہ ہم اس قوم کا حصہ ہیں۔‘انہوں نے کہا کہ ’اس کے بعد اگر کوئی چیلنج ہے تو وہ قانون کی حکمرانی ہے۔ دنیا کا کوئی بھی ملک رُول آف لا کے بغیر خوشحال ہو ہی نہیں سکتا۔

ان کا کہنا تھا کہ ’میں اپنی سکیورٹی فورسز کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں کہ کس طرح انہوں نے ہمیں محفوظ رکھا۔‘انہوں نے کہا کہ ’ہم آج بڑے خوش قسمت ہیں کہ ہمارے پاس آج ڈسپلنڈ فورسز ہیں۔‘ ان کا مزید کہنا تھا کہ ’سکیورٹی تب ہوتی ہے جب انکلیوسیو گروتھ کا تصور موجود ہے اور ریاست مدینہ میں یہی ہوا کہ اپنے کمزور طبقے کی ذمہ داری ریاست لیتی ہے۔ پھر ہر شہری ریاست کو بچانے میں اپنا کردار ادا کرتا ہے۔‘

وزیراعظم نے خطاب کے دوران کہا کہ ’قانون کی بالادستی کے  بغیر کوئی ملک بھی کامیاب نہیں ہو سکتا۔ تعلیمی نظام ہی ایک قوم بناتا ہے۔ ہم پہلی بار مشکل سے ایک مشترکہ تعلیمی نظام لائے ہیں۔‘قومی سلامتی کے عوامی حصے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے قومی سلامتی کے مشیر معید یوسف نے کہا کہ ’ہم نے پوری دنیا کی پالیسیاں دیکھی ہیں اور پاکستان کی قومی سلامتی سے متعلق بہت بات ہوئی۔‘

’جیو اکنامکس جیو سٹریٹیجی سے الگ چیز نہیں، ہماری توجہ اس جانب ہے کہ ہمارا جغرافیہ دنیا کی سرمایہ کاری کے لیے استعمال ہو۔‘انہوں نے کہا کہ ’جب یہ پالیسی منظور ہوئی تو ہم نے یہ طے کیا کہ ہر ماہ اس میں ہونے والی پیش رفت سے آگاہ کیا جائے۔ یہ پچاس پچپن صفحات کی سمری ہے۔ اس پالیسی پر پوری ریاست کا اتفاق رائے ہے۔‘  

معید یوسف کا کہنا تھا کہ ’یہ پالیسی تمام وزارتوں اور اداروں سے مشاورت کے بعد مرتب کی گئی ہے۔ اس کے کچھ حصے ہم پبلک نہیں کرسکتے۔‘’پاکستان کے تمام شعبوں میں اچھی پالیسیاں ہی جو وقت کے ساتھ اپڈیٹ ہوتی رہتی ہیں۔‘تقریب میں وزیراعظم عمران خان بھی موجود تھے جنہوں نے قومی سلامتی پالیسی کے عوامی حصے کی سمری دستخظ کیے۔

If the direction of economy is not right then security will definitely be affected: Imran Khan

Addressing the inauguration ceremony of National Security in Islamabad, the Prime Minister of Pakistan Imran Khan said that he had worked hard to prepare a national consensus document. The federal government of Pakistan on Friday released the public version of the first national policy. Civil and senior military officials, including the Prime Minister, were also present on the occasion.

Prime Minister Imran Khan said that there are various aspects of security. The policy that you have given, you have corrected the qiblah of the nation. If the direction of your economy is not right then your security will definitely be affected. “When you have to go to the IMF again and again, it means you have to compromise on your security somewhere,” he said. security will definitely be affected

Regarding the national security policy, Prime Minister Imran Khan said that we have never formulated a cohesive national security policy. “Your greatest security is when your people stand with you and everyone understands that we are part of this nation.” “The next challenge, then, is the rule of law,” he said. No country in the world can be prosperous without the rule of law.

“I pay tribute to our security forces for keeping us safe,” he said. “We are very fortunate to have disciplined forces today,” he said. He added that “security occurs when the concept of inclusive growth exists and what happened in the state of Madinah is that the state takes responsibility for its weaker sections.” Then every citizen has a role to play in saving the state.”

“No country can succeed without the rule of law,” he said. The education system is what makes a nation. For the first time, we have hardly brought a common education system. Addressing the public part of the National Security Council, National Security Adviser Moeed Yousaf said, “We have seen the policies of the whole world and there has been a lot of talk about Pakistan’s national security.”

“Geoeconomics is no different from geo-strategy. Our focus is on using our geography for world investment.” “Once this policy was approved, security will definitely be affected we decided to keep abreast of developments on a monthly basis,” he said. This is a summary of fifty five pages. The whole state is in agreement on this policy.

Moeed Yousaf said that this policy has been formulated in consultation with all ministries and agencies. We can’t make some parts of it public. ” “Good policies in all sectors of Pakistan that are updated from time to time.” Prime Minister Imran Khan was also present on the occasion and signed a summary of the public part of the National Security Policy.

Read More:: The party in the lockdown demanded the resignation of British Prime Minister Boris Johnson

Advertisement

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here