Status symbol BlackBerry era ends today.

BlackBerry’s operating system and services were cut off today, January 4, after which the era of mobile phones, considered a status symbol, came to an end. A statement from BlackBerry stated that “handsets using in-house software will no longer be able to function properly.” Status Symbol BlackBerry era ends today Formerly known as Research & Motion, the Canadian company introduced mobile phones in the 90’s that made it possible to carry out professional tasks while walking or even outside the office.

The security features and reliability of these phones made them a top priority for responsible people in various fields. Mike Lazarides and Douglas Gurn, two engineering students at Waterloo Canada, started Research in Motion in 1984 as a consultancy service. However, following an agreement with Rogers, a Canadian telecom operator, he began working on wireless technology.

Research In Motion introduced its first successful device in 1997, a pager. This messaging pager was initially sold for 75 675. When the company entered the stock market in 1998, it raised 100 million to increase the work of the devices. BlackBerry then introduced the Interactive Pager 850 in 1999 with the option of email. In 2000, the BlackBerry 957 phone set hit the market with features like calendar, email, contacts, etc.

Two years later, in 2002, BlackBerry introduced the first set that could communicate with each other, but it would require the use of earphones. After that, the company continued to introduce phones with new features. Available with improved security and unique apps, the BlackBerry devices became increasingly popular, at a time when the phones began to appear in the hands of every notable person in the world, including the rulers of developed countries.

Meanwhile, in 2007, Steve Jobs introduced Apple’s iPhone, and gave users the option of Android devices, with larger displays and more applications attracting new users, but the BlackBerry affair did not end there Contrary to popular belief, when Steve Jobs introduced the iPhone in 2007,Status Symbol BlackBerry era ends today the era of the BlackBerry did not end, but the demand for research-in-motion devices increased significantly in the years that followed. There were 10 million BlackBerrys in 2007, up from 50 million in 2011.

When Steve Jobs introduced the iPhone, he presented the keyboard in the rival phone sets as a defect and gave a large display in his phone. Status Symbol BlackBerry era ends today At this point, critics of the technology industry, including a former CEO of Microsoft, appeared to be debating when and why the iPhone would fail.

BlackBerry phones with many small buttons that fit in the palm of your hand were once said to guarantee the ability to perform a variety of tasks Status Symbol BlackBerry era ends today while on the move, but the company that developed them is now stepping out of the world of mobile phones. Provides security software and similar services for governments and institutions.

BlackBerry first announced in 2016 that the company would now operate as a security company. At this stage, the Canadian company stopped the production of the smartphone and its licensing rights were transferred to the Chinese company TCL. Status Symbol BlackBerry era ends today These devices will be manufactured by TCL until the end of the contract in 2020, but the software used in them was Android of Google’s proprietary company Alphabet, which will be available until August.

While memories of the BlackBerry made him the subject of memes at the end of last year and early 2022, at one point the conversation led to a sharp rise in the market share of the BlackBerry company. Comparing BlackBerry’s past with smartphones, one tweeter wrote, “Steve Jobs introduced the iPhone in 2007. Status Symbol BlackBerry era ends today At the time, BlackBerry maker Research In Motion was worth 75 75 billion, five more than Apple’s three trillion.” Billion dollars.

At the time when Jobs introduced the iPhone in a better way, BlackBerry made mistakes that led to its demise. Even in the age of smartphones, a good long-lasting battery is still a desire, Status Symbol BlackBerry era ends today but the BlackBerry also had similar problems. The difference was that if a BlackBerry user complained about a low battery, he could immediately remove the battery from the phone and replace it with another.

Kenzo pointed out this aspect of the BlackBerry phone’s battery, saying that many users used it when others ran out of battery. Announcing the suspension of its services, the company said that BlackBerry 7.1 operating system or earlier operating system, BlackBerry 10 software, BlackBerry Playbook 2.1 and earlier operating systems will no longer be available to users. Devices that are using these services and software will no longer be able to handle data, calls, messages, etc. properly.

Read More:: Today Gold Price in Pakistan On 5 January 2022

سٹیٹس کی علامت بلیک بیری کا دور آج ختم: 38 سالہ سفر میں کب کیا ہوا؟

بلیک بیری کا آپریٹنگ سسٹم اور سروسز کا سلسلہ آج چار جنوری سے منقطع کر دیا گیا ہے جس کے بعد سٹیٹس کی علامت سمجھے جانے والے موبائل فونز کا دور باقاعدہ طور پر ختم ہو گیا ہے۔ بلیک بیری کمپنی کے اعلان میں کہا گیا ہے کہ ان کے ’ان ہاؤس سافٹ ویئر استعمال کرنے والے ہینڈسیٹ اب درست طور پر کام نہیں کر سکیں گے۔‘

ماضی میں ریسرچ اینڈ موشن کے نام سے معروف کینیڈا کی کمپنی نے 90 کی دہائی میں ایسے موبائل فون متعارف کرائے تھے جنہوں نے چلتے پھرتے یا دفاتر کے باہر بھی پروفیشنل ٹاسک پر عملدرآمد ممکن بنایا تھا۔ ان فونز کے سکیورٹی فیچرز اور بااعتماد ہونے نے انہیں مختلف شعبوں کے ذمہ دار افراد کی اولین ترجیح بنائے رکھا تھا۔

1984 میں واٹرلو کینیڈا میں انجینیئرنگ کے دو طالبعلموں مائک لزاریڈس اور ڈگلس گرن نے ریسرچ ان موشن نامی ادارہ ایک کنلسٹنسی سروس کے طور پر شروع کیا تھا۔ تاہم کینیڈیا کے ٹیلی کام آپریٹر روجرس سے معاہدے کے بعد انہوں نے وائرلیس ٹیکنالوجی پر کام شروع کیا۔ ریسرچ ان موشن کی جانب سے اپنی پہلی کامیاب ڈیوائس 1997 میں متعارف کرائی گئی تھی جو ایک پیجر تھا۔ پیغامات بھیج سکنے والا یہ پیجر ابتدا میں 675 ڈالر مالیت کا فروخت کیا گیا۔ 1998 میں ادارہ بازار حصص میں آیا تو ڈیوائسز کے کام میں اضافے کے لیے 100 ملین ڈالر جمع کیے۔

اس کے بعد بلیک بیری نے 1999 میں انٹیرکٹو پیجر 850 متعارف کرایا جس میں ای میل کا آپشن دیا گیا۔ 2000 میں بلیک بیری 957 فون سیٹ مارکیٹ میں پہنچا جس میں کیلنڈر، ای میل، کنٹیکس وغیرہ کے فیچرز دیے گئے۔  دو برس بعد 2002 میں بلیک بیری کا پہلا ایسا سیٹ متعارف کرایا گیا جس کے ذریعے ایک دوسرے سے گفتگو کی جا سکتی تھی، لیکن ایسا کرنے کے لیے ایئرفون استعمال کرنا لازم تھا۔ اس کے بعد کمپنی کی جانب سے نت نئے فیچرز کے ساتھ فون متعارف کرانے کا سلسلہ جاری رہا۔

بہتر سکیورٹی اور منفرد ایپس کے ساتھ دستیاب بلیک بیری ڈیوائسز تیزی سے مقبول ہوئیں، ایک وقت ایسا بھی آیا کہ ترقی یافتہ ملکوں کے حکمرانوں سمیت دنیا کے ہر قابل ذکر فرد کے ہاتھ میں یہی فون دکھائی دینے لگے۔ اسی دوران 2007 میں سٹیوجابز نے ایپل کے آئی فون متعارف کرائے، ساتھ ہی صارفین کو اینڈرائڈ ڈیوائسز کا آپشن بھی ملا تو بڑے ڈسپلے اور زیادہ ایپلیکیشن کی موجودگی نے نئے صارفین کو اپنی جانب راغب کر لیا، لیکن بلیک بیری کا معاملہ یہاں ختم نہیں ہوا۔ 

عام خیال کے برعکس 2007 میں جس وقت سٹیو جابز نے آسٹیو جابز نے آئی فون متعارف کراتے وقت مدمقابل فون سیٹس میں موجود کی بورڈ کو خرابی کے طور پر پیش کیا اور اپنے فون میں بڑا ڈسپلے دیا تھا۔ اس مرحلے پر مائکروسافٹ کے ایک سابق سی ای او سمیت ٹیکنالوجی انڈسٹری کے ناقدین یہ بحث کرتے دکھائی دیتے تھے کہ آئی فون کب اور کیوں ناکام ہو گا۔ئی فون متعارف کرائے تو بلیک بیری کا دور ختم نہیں ہوا بلکہ اس کے بعد برسوں میں ریسرچ ان موشن کی ڈیوائسز کی مانگ میں خوب اضافہ ہوا۔ 2007 میں ایک کروڑ بلیک بیری بنے جو 2011 میں پانچ کروڑ ہو چکے تھے۔

ہتھیلی میں سما جانے والے چھوٹے چھوٹے بہت سے بٹنوں سے مزین بلیک بیری فون ماضی میں سٹیٹس کے ساتھ ساتھ چلتے پھرتے مختلف کام کر سکنے کی اہلیت کی ضمانت کہے جاتے تھے، تاہم انہیں تیار کرنے والی کمپنی اب موبائل فونز کی دنیا سے باہر نکل کر حکومتوں اور اداروں کے لیے سکیورٹی سافٹ ویئر اور ملتی جلتی خدمات فراہم کر رہی ہے۔

پہلی مرتبہ 2016 میں بلیک بیری کی جانب سے اعلان کیا گیا تھا کہ ادارہ اب ایک سکیورٹی کمپنی کے طور پر کام کرے گا۔ اس مرحلے پر کینیڈین کمپنی کی جانب سے سمارٹ فون کی تیاری کا سلسلہ روکتے ہوئے اس کے لائسنسنگ اختیارات چینی کمپنی ٹی سی ایل کو منتقل کر دیے گئے تھے۔ ٹی سی ایل کی جانب سے 2020 میں معاہدے کے اختتام تک یہ ڈیواسئز تیار کی جاتی رہیں تاہم ان میں استعمال ہونے والا سافٹ ویئر گوگل کے ملکیتی ادارے الفابیٹ کا اینڈرائیڈ تھا، جسے اگست تک سپورٹ میسر رہے گی۔

بلیک بیری سے متعلق یادوں نے جہاں اسے گزرے برس کے اختتام اور 2022 کے ابتدائی دنوں میں میمز کا موضوع بنائے رکھا وہیں ایک مرحلے پر اس گفتگو نے بازار حصص میں بلیک بیری کمپنی کے حصص کی قیمتوں میں بھی خاصا اضافہ کیا۔

Advertisement

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here