پاکستانی فوج کے ترجمان میجر جنرل بابر افتخار نے بدھ کو اپنی طویل پریس کانفرنس میں ملکی سلامتی کے حوالے سے تمام سوالوں کے مفصل جواب دیے اور نواز شریف سے ڈیل کو قیاس آرائی قرار دیا، تاہم سی پیک اور خارجہ امور کے حوالے سے سوالوں پر زیادہ تبصرے سے گریز کرتے ہوئے انہیں حکومت سے متعلق قرار دیا۔ انہوں نے جواب میں کہا کہ ’فوج کو مہنگائی کا احساس ہے۔‘

فوجی ترجمان کی نیوز بریفنگ میں مہنگائی اور معیشت کے تذکرے

’فوج نے معیشت پر بات چیت کیا کرنی ہے۔ صاف ظاہر ہے فوج اپنے دفاعی بجٹ کے مطابق ہی رہتی ہے۔‘ملکی معیشت کے حوالے سے پوچھے گئے دونوں سوالوں کے جوابات انہوں نے صراحت سے دیے۔ ان سے صحافی نے سوال کیا کہ آیا پاکستانی فوج کی نظر ملک میں بڑھتی ہوئی مہنگائی اور اس سے لوگوں کو درپیش مسائل پر بھی ہے اور کیا اس پر حکومت سے بات چیت چل رہی ہے؟

’پاک فوج بھی عوام سے ہی ہے‘

انہوں نے مزید کہا کہ ’پاک فوج بھی عوام سے ہی ہے اور پاک فوج کا سپاہی اور افسر بھی اسی دکان سے جا کر سامان خریدتا ہے جہاں سے باقی عوام خریدتے ہیں تو بالکل اس چیز کا احساس ہے۔‘انہوں نے مزید بتایا کہ ’اس حوالے سے جس طرح کی مدد فوج کی جانب سے دی جا سکتی ہے، وہ دی جاتی ہے اور جس طرح کی رائے دی جا سکتی ہے وہ بھی دیتے ہیں۔‘

’معاشی مسائل کے باوجود مسلح افواج نے دفاعی بجٹ اضافہ نہیں لیا‘

معیشت کے حوالے سے ایک اور سوال کیا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ ’اس میں دو رائے نہیں کہ معیشت بہت اہم ہے اور یہی ہر چیز کو آگے بڑھاتی ہے، دفاع کو بھی اسی سے مدد ملتی ہے۔‘ ان کا کہنا تھا کہ ’معاشی مسائل نئے نہیں ہیں۔ معاشی مسائل کے باوجود مسلح افواج نے ملکی وسائل کو سامنے رکھتے ہوئے پچھلے دفاعی بجٹ میں بھی اور اس سال بھی افراط زر کے حساب سے بھی اضافہ نہیں لیا۔‘

ان سے سی پیک کی رفتار پر سوال کیا گیا تو انہوں نے یہ تو کہا کہ ’پاک فوج سی پیک پر مکمل سکیورٹی مہیا کرتی ہے اور سی پیک منصوبے تیزی سے مکمل ہو رہے ہیں،‘ تاہم یہ بھی واضح کیا کہ اس حوالے سوالات سی پیک اتھارٹی سے پوچھے جانے چاہییں۔ اسی طرح او آئی سی کانفرنس کو کامیاب قرار دیتے ہوئے اس پر بھی ان کا کہنا تھا کہ ’خارجہ امور کے حوالے سے سوالات کا جواب دفتر خارجہ ہی دے سکتا ہے۔‘

یہ پہلا موقع نہیں ہے کہ فوجی ترجمان نے ملکی معیشت کے حوالے سے بات کی ہو۔ اس سے قبل اکتوبر 2017 میں جب میجر جنرل آصف غفور ڈی جی آئی ایس پی آر تھے اور مسلم لیگ ن کی حکومت تھی تو ان کا معیشت کے حوالے سے بیان بھی کافی زیربحث رہا تھا۔

پاکستان فوج کے اس وقت کے ترجمان آصف غفور نے ایک نجی ٹی وی چینل سے بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ ’سکیورٹی اور معیشت ساتھ ساتھ چلتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ’پاکستان کی معیشت اگر بری نہیں ہے تو اچھی بھی نہیں ہے۔‘ان کا کہنا تھا کہ ’اگر ملک کی سکیورٹی کے حالات اچھے نہیں ہوں گے تو اس کا اثر معیشت پر پڑے گا اور اگر معیشت خراب ہوگی تو سکیورٹی بھی اثرانداز ہوگی۔‘

’فوج حکومت کے احکامات کے مطابق کام کرتی ہے‘

اپنی پریس کانفرنس میں ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل بابر افتخار نے سول ملٹری تعلقات کے حوالے سے سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا تھا کہ ’الحمدللہ سول ملٹری تعلقات میں کوئی مسئلہ نہیں۔ فوج حکومت کا ماتحت ادارہ ہے اور اس کے احکامات کے مطابق کام کرتا ہے۔‘ انہوں نے کہا کہ ’بس یہی کچھ ہے اس سے زیادہ کچھ نہیں۔‘

’شام کو ہر ٹی وی پروگرام میں کہا جاتا ہے کہ اسٹیبلشمنٹ نے یہ کردیا وہ کردیا، میری درخواست ہے کہ اسٹیبلشمنٹ کو اس بحث سے باہر رکھیں۔ ہمیں اس سے باہر رکھیں، ادارے کو اس سے باہر رکھیں اور اس پر بحث مت کریں۔‘اُنہوں نے کہا کہ ’پاکستان میں صحت، تعلیم، انفراسٹرکچر، آبادی میں اضافے اور زراعت جیسے دیگر اہم مسائل ہیں جن پر بات کرنے کی ضرورت ہے۔‘

briefing mentions inflation and the economy

Pakistan Army spokesman Major General Babar Iftikhar in his long press conference on Wednesday gave detailed answers to all the questions regarding national security and termed the deal with Nawaz Sharif as speculation. briefing mentions inflation and the economy Refraining from commenting, he described them as related to the government. “The army is aware of inflation,” he said.

The military has to discuss the economy. Clearly, the military lives up to its defense budget. “He gave clear answers to both the questions asked regarding the national economy. briefing mentions inflation and the economy The journalist asked him whether the Pakistan Army was keeping an eye on the rising inflation in the country and the problems faced by the people and whether talks were underway with the government.

“Pak army is also from the people”

He further said that the Pakistan Army is also from the people and the soldiers and officers of the Pakistan Army also go to the same shop and buy goods from where the rest of the people buy. He further added that in this regard, the kind of help that can be given by the army is given and the kind of opinion that can be given is also given.

Armed forces do not increase defense budget despite economic problems

When asked about the economy, he said, “There is no doubt that the economy is very important and it drives everything forward. It also helps the defense.” “Economic problems are not new,” he said. briefing mentions inflation and the economy Despite the economic problems, the armed forces have not increased the previous defense budget and this year in terms of inflation, keeping in view the country’s resources.

When asked about the pace of C-Pack, he said that “Pakistan Army provides full security to C-Pack and C-Pack projects are being completed expeditiously”, however, he also clarified that The pack authority should be asked. Declaring the OIC conference a success, he said, “Only the Foreign Office can answer questions regarding foreign affairs.”

briefing mentions inflation and the economy This is not the first time a military spokesman has spoken about the country’s economy. Earlier, in October 2017, when Major General Asif Ghafoor was the DG ISPR and the PML-N government was in power, his statement regarding the economy was also under discussion.

Asif Ghafoor, then spokesman for the Pakistan Army, told a private TV channel that “security and the economy go hand in hand.” “Pakistan’s economy is not bad, it is not good,” briefing mentions inflation and the economy he said. He said that if the security situation in the country is not good then it will affect the economy and if the economy is bad then security will also be affected.

“The army works according to the orders of the government.”

In his press conference, DG ISPR Major General Babar Iftikhar, while answering a question regarding civil-military relations, said, “Alhamdulillah, there is no problem in civil-military relations. briefing mentions inflation and the economy The army is a subordinate body of the government and acts according to its orders, “he said.” That’s all there is to it, nothing more.

In the evening, every TV program says that the Establishment did what it did. I request that the Establishment be kept out of this debate. Keep us out of it, keep the organization out of it and don’t discuss it. “Pakistan has other important issues that need to be addressed such as health, education, infrastructure, population growth and agriculture,” he said. DG ISPR Major General Babar Iftikhar Establishment Civil Military Relations Urdu News

Read More :: Which deal succeeded and which failed in Pakistani politics

Advertisement

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here