Pakistan Navy’s intra-court appeals returned due to technical glitch

appeals returned due to technical glitch

اسلام آباد ہائی کورٹ نے نیوی سیلنگ کلب گرانے، پاکستان نیول فارمز اورنیوی  گالف کورس کو سی ڈی اے کی تحویل میں دینے کے فیصلوں کے خلاف پاکستان نیوی کی انٹراکورٹ اپیلیں تکنیکی خامی کے باعث واپس کر دیں۔عدالت نے کہا کہ وفاق کی طرف وزارت دفاع کے ذریعے اپیلیں دائر کی جا سکتی ہیں۔

پاکستان نیوی کی انٹراکورٹ اپیلیں تکنیکی خامی کے باعث واپس

پاکستان نیوی نے نیوی سیلنگ کلب گرانے اور پاکستان نیول فارمز کی اراضی سی ڈی اے کے حوالے کرنے کے7 جنوری اور نیوی  گالف کورس کو سی ڈی اے کی تحویل میں دینے کے 11 جنوری کے عدالتی فیصلوں کے خلاف اسلام آباد ہائی کورٹ میں انٹراکورٹ اپیلیں دائر کیں جس میں سنگل بینچ کا فیصلہ کاالعدم قرار دینے اور اپیلوں پر فیصلے تک عدالتی فیصلے معطل کرنے کی استدعا کی گئی تھی۔

جسٹس عامر فاروق اور جسٹس میاں گل حسن اورنگ زیب پر مشتمل بینچ نے سماعت کی۔وکیل نے کہا ’جس کیس میں نیوی گالف کورس کو غیر قانونی قرار دیا گیا اس میں پاکستان نیوی فریق ہی نہیں تھی۔‘جسٹس میاں گل حسن اورنگ زیب نے کہا کہ ’پاکستان نیوی کو سیکرٹری دفاع کے ذریعے انٹراکورٹ اپیل دائر کرنی چاہیے تھی۔

اس سے قبل پاکستان نیوی نے نیوی سیلنگ کلب کو گرانے اور پاکستان نیول فارمز کی اراضی تحویل میں لینے کے فیصلے کو اسلام آباد ہائیکورٹ میں چیلنج کیا گیا تھا۔
جمعرات کو پاکستان نیوی کی جانب سے دو انٹراکورٹ اپیلوں میں سنگل بینچ کے الگ الگ فیصلوں کو چیلنج کیا گیا اور فیصلوں کو کالعدم قرار دیے جانے کی استدعا کی گئی۔ پاکستان نیوی کی جانب سے انٹراکورٹ اپیلوں پر آج جمعرات کو ہی سماعت کے لیے بنچ تشکیل دینے کی استدعا کی گئی تھی۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے ان اپیلوں پر سماعت کے لیے خصوصی بنچ تشکیل دے دیا جو جسٹس عامر فاروق اور جسٹس گل حسن اورنگزیب پر مشتمل تھا۔ خیال رہے کہ اسلام آباد ہائی کورٹ نے راول جھیل کے کنارے نیوی سیلنگ کلب کی تعمیر غیرقانونی قرار دیتے ہوئے کلب کو تین ہفتوں میں گرانے کا حکم دیا تھا۔

اسلام آباد ہائیکورٹ نے نیول فارمز اور نیوی سیلنگ کلب کے خلاف درخواستوں پر محفوظ فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ رئیل سٹیٹ بزنس کے لیے ادارے کا نام استعمال نہیں کیا جا سکتا۔ عدالت نے پاکستان نیول فارمز کے لیے جاری کیے گئے این او سی کو بھی غیر قانونی قرار دیا تھا۔

اسی طرح عدالت کی جانب سے نیول فارمز کی اراضی کو اتھارٹی کی تحویل میں دینے کا فیصلہ بھی سنایا گیا تھا۔چیف جسٹس اطہر من اللہ نے 11 جنوری کو نیوی گالف کورس کو غیر قانونی قرار دینے کا فیصلہ سنایا تھا۔

Pakistan Navy’s intra-court appeals returned due to technical glitch

ISLAMABAD: The Islamabad High Court (IHC) has rejected the Pakistan Navy’s intra-court appeals against the decision to demolish the Navy Sailing Club, hand over Pakistan Naval Farms and Navy Golf Course to the CDA due to a technical glitch. appeals returned due to technical glitch The court said appeals could be made to the federation through the Ministry of Defense.


The Pakistan Navy has filed intra-court appeals in the Islamabad High Court against the January 7 court decision to demolish the Navy Sailing Club and hand over the land of Pakistan Naval Farms to the CDA and hand over the Navy Golf Course to the CDA on January 11. It sought annulment of the decision of the single bench and suspension of the judgment till the decision on the appeals.

A bench comprising Justice Amir Farooq and Justice Mian Gul Hassan Aurangzeb heard the case.
“Pakistan Navy was not a party in the case in which the Navy Golf Course was declared illegal,” the lawyer said. Justice Mian Gul Hassan Aurangzeb said that the Pakistan Navy should have filed an intra-court appeal through the Secretary Defense. appeals returned due to technical glitch

Earlier, the decision of the Pakistan Navy to demolish the Navy Sailing Club and take over the lands of Pakistan Naval Farms was challenged in the Islamabad High Court. On Thursday, appeals returned due to technical glitch the Pakistan Navy in two intra-court appeals challenged the separate decisions of the single bench and sought annulment of the decisions.

The Pakistan Navy had requested the formation of a bench to hear the intra-court appeals on Thursday. The Islamabad High Court constituted a special bench comprising Justice Amir Farooq and Justice Gul Hassan Aurangzeb to hear the appeals.

It may be recalled that the Islamabad High Court had declared the construction of Navy Sailing Club on the shores of Rawal Lake illegal and ordered to demolish the club within three weeks.
The Islamabad High Court, while ruling on the petitions against Naval Farms and Navy Sailing Club, said that the name of the institution could not be used for real estate business.

The court also declared the NOC issued for Pakistan Naval Farms illegal. Similarly, the court also decided to hand over the lands of Naval Farms to the authority. Chief Justice Athar Minallah had on January 11 ruled that the Navy Golf Course was illegal.

Read More:: Pakistan Super League 2022 ticket sales started

Author: Ayesha KhanI am here! providing you latest News| Technology News |Trending Latest News Updates

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *