It took 68 years for a letter to reach its destination

In today’s modern age, an SMS or any email via mobile phone reaches from one country to another in a matter of seconds, otherwise the letter would have to wait for many months.

It took 68 years for a letter to reach its destination.
It took 68 years for a letter to reach its destination.

Many times the letters may not even reach their destination. But there was an incident in the United States where it took 68 years for a letter to reach its destination.

The incident took place with a woman from the US state of Minnesota. A woman named Susan Norden moved into her new home where she received her letter.

The letter received was dated 2 and the person to whom the letter was addressed was Mr. and Mrs. Ed Nelson.

“I was shocked to read the letter’s history,” Susan Norden told KQDSTV. The letter was sent by someone from Copenhagen (the capital of Denmark) and the letter announced the good news of the birth of a baby named Jimmy, which shocked the woman.

It was Mr. and Mrs. Ed Nelson when Norden found out about the old landlord’s occupants. The woman used Facebook to find a loved one, and eventually managed to contact her granddaughter, Connie Endroom.

READ MORE :: NEW YEAR CELEBRATION

ایک خط کو اپنی منزل تک پہنچنے میں 68 سال لگ گئے ۔۔ خط میں ایسا کیا لکھا تھا کہ موصول ہونے والے شخص کے ہوش اُڑ گئے؟

آج کے جدید دور میں موبائل فون کے ذریعے ایک ایس ایم ایس یا کوئی بھی ای میل ایک کلک کے پر سیکنڈز میں ایک ملک سے دوسرے ملک پہنچ جاتی ہے ورنہ پہلے تو کئی ماہ تک خط کا انتظار کرنا پڑتا تھا۔
کئی بار تو خط اپنی منزل تک پہنچ بھی نہیں پاتے ہوں گے۔لیکن امریکہ میں ایسا واقعہ ہوا جہاں ایک خط کو اپنی منزل تک پہنچنے میں 68 سال لگ گئے۔

امریکی ریاست مینیسوٹاسے تعلق رکھنے والی ایک خاتون کےساتھ یہ واقعہ پیش آیا۔ سوزن نورڈن نامی خاتون اپنے نئے گھر میں منتقل ہوئی تھیں جہاں انہیں اپنا خط موصول ہوا۔
موصول ہونے والے خط میں ١٩٦٣ کی تاریخ درج تھی اور جن کے نام خط بھیجا گیا تھا وہ مسٹر اینڈ مسز ایڈ نیلسن تھے۔

سوزن نورڈن نے کے کیو ڈی ایس ٹی وی کو بتایا کہ میں خط کی تاریخ پڑھ کر حیران رہ گئی تھی۔ خط کوپن ہیگن (دارالحکومت ڈنمارک) سے کسی نے بھیجا تھا اور خط میں کسی جِمی نامی بچے کی پیدائش کی خوش خبری سنائی گئی تھی جسےدیکھ خاتون دنگ رہ گئیں۔
نورڈن نے جب پرانے مالک مکان کے رہائشیوں کا پتہ کیا تو وہ مسٹر اینڈ مسز ایڈ نیلسن ہی تھے۔ خاتون نے ان کے کسی عزیز کو ڈھونڈنے کے لیے فیس بُک کا سہارا لیا اور بالآخر ان کی پوتی سے رابطہ کرنے میں کامیاب ہوگئیں جن کا نام کونی اینڈرہوم تھا۔

Advertisement

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here