How much did Pakistan debt increase in 2021?

How much did Pakistan debt increase in 2021?

Among the problems that Pakistan is going to face in the new year is the rapid increase in debt and what was the situation of debt in 2021, how much the country’s debt has increased .

How much did Pakistan's debt increase in 2021?
How much did Pakistan’s debt increase in 2021?

Mini budget: Out of 343 billion, only 2 billion tax was levied on common man, Finance Minister.

The Supplementary Finance Bill 2021 was introduced in the National Assembly today, which was strongly protested by the opposition.

The National Assembly session has been adjourned till 11 am on Friday. Addressing a press conference after the meeting, Federal Minister for Finance Shaukat Tareen said that the talk of increasing the burden on the people with the supplementary finance bill was baseless.

He said that the IMF wants to impose sales tax on everyone, wants to get back the tax exemption of Rs 700 billion, we brought it to Rs 343 billion.

He said that a total of Rs 343 billion tax exemption has been abolished out of which Rs 112 billion tax exemption on machinery has been abolished, Rs 160 billion tax exemption on pharmaceuticals has been abolished and Rs 71 billion on import of remaining luxury items. Tax exemption has been abolished. Tax refunds will be available on machinery and pharma industry.

READ MORE :: TODAY GOLD PRICE

2021 میں پاکستان کے قرضوں میں کتنا اضافہ ہوا؟

پاکستان   نئے سال میں جن مسائل کا سامنا کرنے جارہا ہے اس میں قرضوں میں تیزی سے اضافہ سرفہرست ہے اور  2021 میں قرضوں کی کیا صورتحال رہی،  ملکی قرضوں میں کتنا اضافہ ہوا اس حوالے سے جیونیوز کی خصوصی رپورٹ جانیے۔

مِنی بجٹ: 343 ارب میں سے عام آدمی پر صرف 2 ارب کا ٹیکس لگایا، وزیر خزانہ

قومی اسمبلی میں آج ضمنی مالیاتی بل 2021 پیش کردیا گیا جس پر اپوزیشن نے شدید احتجاج کیا۔

قومی اسمبلی کا اجلاس جمعے کی صبح 11 بجے تک ملتوی کردیا گیا ہے۔ اجلاس کے بعد پریس کانفرنس کرتے ہوئے وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ ضمنی مالیاتی بل سے عوام پر بوجھ بڑھنے کی باتیں بے بنیاد ہیں۔
انہوں نے بتایا کہ آئی ایم ایف تو سب پر سیلز ٹیکس لگوانا چاہتا ہے، چاہتا ہے کہ 700 ارب روپے کی ٹیکس چھوٹ واپس لیں، ہم اسے 343 ارب روپے پر لے آئے۔

انہوں نے بتایا کہ مجموعی طور پر 343 ارب روپے کی ٹیکس چھوٹ ختم کی گئی جس میں سے مشینری پر 112 ارب کی ٹیکس چھوٹ ختم کی ہے، فارماسیوٹیکلز پر 160 ارب کی ٹیکس چھوٹ ختم کی ہے، باقی لگژری اشیاء کی درآمد پر 71 ارب روپےکی ٹیکس چھوٹ ختم کی ہے۔ مشینری اور فارما انڈسٹری پر ٹیکس ریفنڈ ہو سکےگا۔

Author: Muhammad TalhaI am here!providing you historic books in pdf files.

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *