7 years have passed since the tragedy of APS: the grief of the bereaved is fresh, tears are flowing and heart is sad

7 years have passed since the tragedy of APS

The Army Public School (APS) tragedy in Peshawar is seven years old.

7 years have passed since the tragedy of APS
7 years have passed since the tragedy of APS

On December 16, 2014, a tragic event in the history of Pakistan took place in which 6 terrorists attacked Army Public School Peshawar and indiscriminately fired bullets at students who were thirsting for knowledge, leaving innocent students and teachers addicted to blood. And the school became contaminated with the smell of gunpowder.

Immediately after the attack, security forces surrounded the school and killed six suicide bombers of the banned Tehreek-e-Taliban Pakistan (TTP) after a lengthy operation.

The brutal terrorist attack killed 147 people, including 122 students, 22 school staff members and three security personnel.

Security forces arrested six terrorists involved in the Army Public School attack, who were sentenced to death by military courts, and four terrorists were hanged in 2015 and one in 2017.

One of the two brothers was martyred and the other was seriously injured in the same tragedy. The surviving brother says the tragic incident encouraged him to fight back.

The tragedy breathed new life into the war on terror, which resulted in the formulation of a National Action Plan to eradicate terrorism from the tribal areas.

In the tragedy of APS, those who are buried under the dust of their minds are saddened when they remember their loved ones. However, when they are called upon in reference to the families of the martyrs, they feel proud.

While the eradication of terrorism from the country is due to the sacrifices of the Martyrs Army Public School, the nefarious intentions of the enemies of education, which have pushed future generations into the darkness of ignorance, have also come to naught.

READ MORE :: PM IMRAN KHAN SPEECH ABOUT APS PESHAWER

سانحہ اے پی ایس کو 7 برس مکمل: لواحقین کا غم تازہ، آنسو رواں اور دل اداس

پشاور میں پیش آنے والے سانحہ آرمی پبلک اسکول (اے پی ایس) کو سات برس مکمل ہوگئے ہیں۔

16 دسمبر 2014 کو پاکستانی تاریخ کا دردناک واقعہ رونما ہوا جس میں 6 دہشت گردوں نے آرمی پبلک اسکول پشاور پرحملہ کیا اور علم کی پیاس بجھانے والے طلباء پر اندھا دھند گولیوں کی بوچھاڑ کی جس سے معصوم طالب علم اور بے گناہ اساتذہ خون میں لت پت ہو گئے اور اسکول بارود کی بو سے آلودہ ہوگیا۔
حملے کے فوری بurdعد سکیورٹی فورسز نے اسکول کا گھیراؤ کیا اور کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے چھ خودکش حملہ آوروں کو طویل آپریشن کے بعد موت کے گھاٹ اتار دیا۔

درندہ صفت دہشتگردوں کے حملے میں 147 افراد شہید ہوئے جن میں 122 طلباء ، 22 اسکول اسٹاف ممبر اور  تین سکیورٹی اہلکار شامل تھے۔

آرمی پبلک اسکول حملے میں ملوث چھ دہشتگردوں کو سکیورٹی فورسز نے گرفتار کیا جنہیں ملٹری کورٹس نے موت کی سزائیں سنائیں اور  چار دہشتگردوں کو 2015 جبکہ ایک کو 2017 میں سولی پر لٹکایا گیا۔

اسی سانحے میں دو بھائیوں میں ایک شہید اور دوسرا شدید زخمی بھی ہوا۔ زندہ بچ جانے والے بھائی کا کہنا ہے کہ اس المناک واقعہ نے اسے مشکل حالات سے لڑنے کا حوصلہ دیا۔

سانحے نے دہشتگردی کے خلاف جنگ میں نئی روح پھونکی جس کے نتیجے میں نیشنل ایکشن پلان تشکیل دے کر قبائلی علاقوں سے دہشتگردی کا خاتمہ کیا گیا۔
سانحہ اے پی ایس میں منوں مٹی تلے دبانے والے اپنے پیاروں کو یاد کرتے ہیں تو دکھی ہوجاتے ہیں تاہم جب انہیں شہداء کے لواحقین کے حوالے سے پکارا جاتا ہے تو وہ فخر محسوس کرتے ہیں۔ 
ملک سے دہشتگردی کا خاتمہ جہاں شہداء آرمی پبلک اسکول کی قربانیوں کے مرہون منت ہے وہیں آئندہ نسلوں کو جہالت کے اندھیروں میں دھکیلنے والے تعلیم دشمنوں کے مذموم عزائم بھی خاک میں مل گئے۔

Author: Muhammad TalhaI am here!providing you historic books in pdf files.

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *