next Chief Justice Umar Ata Bandial

پاکستان کے صدر عارف علوی نے آئین کے آرٹیکل 175 کے تحت جسٹس عمر عطا بندیال کو سپریم کورٹ کا اگلا چیف جسٹس مقرر کر دیا ہے۔  جسٹس عمر عطا بندیال دو فروری 2022 کو اپنے عہدے کا حلف لینے کے بعد باقاعدہ ذمے داریاں سنبھالیں گے۔

متوازن شخصیت کے حامل اگلے چیف جسٹس عمر عطا بندیال کب تک عہدے پر رہیں گے؟

جسٹس عمر عطا تقریباً 19 ماہ تک چیف جسٹس کے عہدے پر رہیں گے اور اگلے سال 16 ستمبر کو ان کے عہدے کی مدت مکمل ہوگی۔ جسٹس بندیال اس سے قبل لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس بھی رہ چکے ہیں۔ بین الاقوامی سطح پر کمرشل تنازعات میں وکالت کرنے والے عمر عطا بندیال سترہ ستمبر 1958 کو لاہور میں پیدا ہوئے جبکہ ابتدائی تعلیم، کوہاٹ، پشاور، راولپنڈی اور لاہور کے مختلف سکولوں میں حاصل کی۔

امریکہ کی کولمبیا یونیورسٹی سے اکنامکس میں گریجویشن کے بعد انہوں نے برطانیہ کی کیمبرج یونیورسٹی سے قانون کی ڈگری حاصل کی جبکہ لندن کے مشہور لنکنز اِن سے بیرسٹر ایٹ لا کیا۔سنہ 1983 میں عمر عطا بندیال کی لاہور ہائیکورٹ میں بطور وکیل انرولمنٹ ہوئی۔انہوں نے پنجاب یونیورسٹی لا کالج لاہور میں کنٹریکٹ لا اور ٹورٹس لا کے مضامین بھی پڑھائے۔بطور وکیل انہوں نے زیادہ تر بینکنگ، کمرشل، ٹیکس اور پراپرٹی کے مقدمات لڑے۔ وہ لندن اور پیرس میں قائم مختلف ثالثی ٹریبونلز میں بھی پیش ہوئے۔

ان کو سنہ 2004 کے آخری مہینے میں لاہور ہائیکورٹ کا جج بنایا گیا اور انہوں نے نومبر 2007 میں پرویز مشرف کے پی سی او پر حلف اٹھانے سے انکار کیا۔وکلا کی تحریک کے نتیجے میں عدلیہ بحالی کے دوران وہ عدلیہ میں واپس آئے۔جون 2014 میں سپریم کورٹ کے جسٹس کے طور پر تعیناتی سے قبل وہ دو برس لاہور ہائیکورٹ کے چیف جسٹس بھی رہے۔

جسٹس عمر عطا بندیال کی عدالت میں مختلف مقدمات میں پیش ہونے والے وکلا کی ان کے بارے میں رائے اچھی ہے اور ان کو بات سننے والے منصف کے طور پر جانتے ہیں۔فیصل فرید چوہدری ایڈووکیٹ نے اردو نیوز سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ‘جسٹس عمر عطا بندیال متوازن شخصیت اور دھیمے مزاج کے جج ہیں جو قانون پر عبور رکھتے ہیں۔’ان کا کہنا تھا کہ آنے والے چیف جسٹس وکلا کی بات سنتے ہیں اور ان کو کبھی عدالت میں سخت لہجہ اختیار کرتے ہوئے نہیں دیکھا۔

فیصل چوہدری ایڈووکیٹ کے مطابق عدلیہ میں تحمل سے وکلا کے دلائل سننے والے ججز کم ہوتے جا رہے ہیں اور جسٹس عمر عطا بندیال ان ججز میں سے ہیں جو پرسکون رہ کر فریقین کے وکلا کو سن کر عدالت چلاتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ‘جسٹس بندیال جب لاہور ہائیکورٹ کے چیف جسٹس تھے تب بھی انہوں نے عزت کمائی۔’

فیصل چوہدری ایڈووکیٹ نے کہا کہ جسٹس عمر عطا بندیال میں یہ صلاحیت ہے کہ وہ سب کو ساتھ لے کر چلتے ہیں۔ ‘اور یہ جو تاثر ہے کہ عدلیہ کے ججز میں تقسیم ہے وہ بطور چیف جسٹس اس کو دور کرنے کی پوزیشن میں ہوں گے۔’سینیئر وکیل نے کہا کہ جسٹس بندیال دانش مند جج ہیں اور اپنی فہم و فراست سے سپریم کورٹ کے وقار کو مزید بڑھائیں گے۔ ‘ان کی طبیعت میں کوئی اتار چڑھاؤ نہیں ہے، ذمیندار گھرانے سے تعلق رکھتے ہیں۔ اپنی زبان اور کلچر سے لگاؤ بھی ہے۔’

رواں سال سپریم کورٹ کے کون سے ججز ریٹائر ہوں گے؟

پاکستان کی سپریم کورٹ میں آئین کے تحت چیف جسٹس سمیت کُل 17 ججز ہو سکتے ہیں۔اس وقت سپریم کورٹ میں 16 ججز ہیں اور جسٹس عائشہ ملک کے تعیناتی کی پارلیمانی کمیٹی سے منظوری کے بعد تعداد پوری ہو جائے گی۔رواں سال چیف جسٹس گلزار احمد کے علاوہ سپریم کورٹ کے چار ججز اپنی مدت مکمل کرنے پر عہدوں سے ریٹائرڈ ہو جائیں گے۔

جسٹس قاضی محمد امین 25 مارچ کو ریٹائرڈ ہوں گے۔ وہ تقریبا تین برس سپریم کورٹ کے جج رہے۔اس سے قبل وہ لاہور ہائیکورٹ کے جج رہ چکے ہیں۔جسٹس مقبول باقر چار اپریل کو 65 برس کی عمر پوری ہونے پر اپنے عہدے سے سبکدوش ہو جائیں گے۔جسٹس باقر سات برس سپریم کورٹ کے جج رہے۔ اس دوران انہوں نے کئی اہم فیصلے قلمبند کیے۔ وہ اس سے قبل سندھ ہائیکورٹ کے چیف جسٹس بھی رہ چکے ہیں جہاں ان کراچی میں ایک خودکش حملہ بھی کیا گیا تھا جس میں وہ شدید زخمی ہوئے تھے۔

جسٹس مظہر عالم میاں خیل رواں برس ریٹائرڈ ہونے والے سپریم کورٹ کے تیسرے جسٹس ہوں گے۔ ان کے عہدے کی مدت 13جولائی کو مکمل ہوگی۔جسٹس سجاد علی شاہ رواں سال 13 اگست کو 65 برس کی عمر پوری ہونے پر عہدے سے سبکدوش ہو جائیں گے۔انہوں نے سندھ ہائیکورٹ کے چیف جسٹس کے طور پر بھی خدمات انجام دیں۔

How long will the next Chief Justice Umar Ata Bandial, who has a balanced personality, remain in office?

President of Pakistan Arif Alvi has appointed Justice Umar Ata Bandial as the next Chief Justice of the Supreme Court under Article 175 of the Constitution. Justice Umar Ata Bandial will assume his formal responsibilities after taking oath of office on February 2, 2022. next Chief Justice Umar Ata Bandial

Justice Umar Ata will hold the post of Chief Justice for about 19 months and his term will end on September 16 next year. Justice Bandial has previously been the Chief Justice of the Lahore High Court. Omar Ata Bandial, an advocate in international commercial disputes, was born in Lahore on September 17, 1958 and received his early education in various schools in Kohat, Peshawar, Rawalpindi and Lahore.

After graduating in economics from Columbia University in the United States, he earned a law degree from Cambridge University in the United Kingdom and a barrister-at-law from the famous Lincoln Inn in London. In 1983, Omar Ata Bandial was enrolled in the Lahore High Court as a lawyer. He also taught Contract Law and Tourism Law at Punjab University Law College, Lahore.

As a lawyer, he fought most of the banking, commercial, tax and property cases. He also appeared in various arbitration tribunals in London and Paris. He was made a judge of the Lahore High Court in the last month of 2004 and refused to take oath as the PCO of Pervez Musharraf in November 2007. He returned to the judiciary during the restoration of the judiciary as a result of the lawyers’ movement.


He was also the Chief Justice of the Lahore High Court for two years before being appointed as a Justice of the Supreme Court in June 2014. The lawyers appearing in various cases in the court of Justice Omar Ata Bandial have a good opinion about him and they know him as a judge. Advocate Faisal Farid Chaudhry while talking to Urdu News said that “Justice Umar Ata Bandial is a balanced personality and mild-mannered judge who is well versed in law.”

He said that the incoming Chief Justice listens to the lawyers and never saw them taking a hard line in the court. According to Faisal Chaudhry Advocate, the number of judges listening to the arguments of lawyers is decreasing due to restraint in the judiciary and Justice Umar Ata Bandial is one of the judges who calmly listens to the lawyers of the parties and runs the court.

“Justice Bandial earned respect even when he was the Chief Justice of the Lahore High Court,” he said. Faisal Chaudhry Advocate said that Justice Umar Ata Bandial has the ability to take everyone with him. next Chief Justice Umar Ata Bandial “And the perception that there is a division among the judges of the judiciary as the Chief Justice will be in a position to remove it.”

The senior counsel said that Justice Bandial was a wise judge and would further enhance the prestige of the Supreme Court with his understanding and foresight. next Chief Justice Umar Ata Bandial “There are no fluctuations in their nature. They belong to responsible families. There is also attachment to one’s language and culture. next Chief Justice Umar Ata Bandial

Which Supreme Court judges will retire this year?

The Supreme Court of Pakistan, under the Constitution, can have a total of 17 judges, including the Chief Justice. There are currently 16 judges in the Supreme Court and the number will be finalized after the appointment of Justice Ayesha Malik is approved by the parliamentary committee.
Apart from Chief Justice Gulzar Ahmed, four judges of the Supreme Court will retire this year.
Justice Qazi Muhammad Amin will retire on March 25. He was a judge of the Supreme Court for almost three years.

He has previously been a judge of the Lahore High Court. Justice Maqbool Baqir will retire on April 4 at the age of 65. Justice Baqir was a judge of the Supreme Court for seven years. During this time he recorded many important decisions. He had earlier been the Chief Justice of the Sindh High Court where he was also seriously injured in a suicide attack in Karachi.

Justice Mazhar Alam Mian Khel will be the third Supreme Court Justice to retire this year. His term ends on July 13. next Chief Justice Umar Ata Bandial Justice Sajjad Ali Shah will retire on August 13 this year at the age of 65. next Chief Justice Umar Ata Bandial He also served as the Chief Justice of the Sindh High Court.

Read More:: ‘Heat heat’ between PM and Pervez Khattak at parliamentary party meeting

Advertisement

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here