Strict laws issued against those going on Hajj without permit

laws issued against those going on Hajj

پرمٹ کے بغیر حج پر جانے والوں کے خلاف سخت قوانین جاری

سعودی عرب میں وزارت داخلہ نےپرمٹ کے بغیرحج کرنے والوں کے لیے سخت سزائیں مقرر کردیں- حج انتظامات کو مؤثر بنانے، حج مقامات کا ماحول عبادت کے لیے ساز گار رکھنے، بدنظمی کو روکنے کے لیے مقررہ قوانین و ضوابط کی خلاف ورزیوں اور ان پر سزاؤں کا چارٹ جاری کردیا ہے۔

اخبار 24 کے مطابق وزارت داخلہ نے حج قوانین و ضوابط کی خلاف ورزی کرنے والوں کے  لیے قید، جرمانے اور حج سے محرومی کی سزائیں متعین کی ہیں۔وزارت داخلہ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ جو سعودی شہری اور خلیجی تعاون کونسل میں شامل ممالک کے باشندے مقررہ قوانین و ضوابط کی خلاف ورزی کے مرتکب ہوں گے انہیں مندرجہ ذیل سزائیں دی جائیں گی۔

جو سعودی یا خلیجی حج اجازت نامے کے بغیر منیٰ، مزدلفہ اور عرفات میں جائے گا اس پر 15 ہزار ریال جرمانہ ہوگا- اس کے ریکارڈ میں یہ بات لکھ دی جائے گی کہ اس نے اس سال حج کرلیا ہے اور دوبارہ خلاف ورزی پر آئندہ حج موسم میں سزا دگنی کردی جائے گی- 

جو سعودی یا خلیجی حج اجازت نامے کے بغیر مکہ مکرمہ  کے اطراف اس کی اندرونی بیلٹ منیٰ، مزدلفہ و عرفات کے اطراف اور الرصیفہ میں حرمین شریفین ٹرین سٹیشن پر پکڑا جائے گا اس پر دس ہزار ریال جرمانہ  ہوگا- خلاف ورزی دہرانے پر سزا دگنی ہوگی- حج مقامات سے باہر پکڑے جانے والے کو حج کا موقع نہیں دیا جائے گا- 

مذکورہ خلاف ورزیوں پر سزاؤں کا عمل درآمد ہر سال 28 ذی قعدہ سے ہوگا- مبینہ خلاف ورزیوں میں سے کسی ایک خلاف ورزی تیسری بار دہرائے جانے پر سعودی اور خلیجی شہری پر جرمانہ ہوگا- اسے پبلک پراسیکیوشن کے حوالے بھی کیا جائے گا تاکہ وہ اس کے خلاف قید کی سزا کا فیصلہ کرسکے- قید کم از کم ایک ماہ اور زیادہ  سے زیادہ چھ ماہ کی ہوگی- پبلک پراسیکیوشن ہی اس کی بابت قانونی کارروائی کے احکام بھی جاری کرے گا- 

حج اجازت نامے نہ رکھنے والے عازمین کو مقامات حج لے جانے والے پر 50 ہزار ریال تک کا جرمانہ ہوگا- جتنے افراد کو لے جائے گا اسی تناسب سے جرمانے ہوں گے یا چھ ماہ تک قید کی سزا ہوگی- دونوں سزائیں بھی دی جاسکتی ہیں- عازمین کو حج مقامات پر لے جانے والی  گاڑی کو بھی ضبط کرلیا جائے گا- ضبطی کا فیصلہ عدالت سے جاری ہوگا اور ٹرانسپورٹر کی تشہیر بھی ہوگی- 

غیرسعودی اور غیر خلیجی حج قوانین کی خلاف ورزی کا مرتکب ہونے پر اسے مملکت سے بے دخل کردیا جائے گا- مملکت میں داخل ہونے سے  روک دیا جائے  گا- اس حوالے  سے وزیر داخلہ کے جاری کردہ لائحہ عمل کے مطابق کارروائی ہوگی- ہر سال 25 شوال  سے غیرملکیوں اور مملکت میں مقیم تارکین کو مکہ مکرمہ جانے سے روک دیا جائے گا-

اس سے وہ مقیم تارکین وطن مستثنی ہوں گے جو مکہ شہر میں سکونت پذیر ہوں اسی طرح سے وہ غیرملکی بھی مستثنی ہوں گے جو حج موسم میں وہاں کسی ذمہ  داری پر مامور ہوں گے بشرطیکہ ان کے پاس محکمہ پاسپورٹ سے اس کا پرمٹ موجود ہو- یہ پابندی چھ ذی قعدہ  1427 ھ بمطابق 27 نومبر 2006 کو جاری کردہ شاہی فرمان کے بموجب نافذ کی جائے گی-

وزارت داخلہ کی جانب سے اس امر کی صراحت کردی گئی ہے کہ اس کے ماتحت ادارے، سیکیورٹی فورسز کے معاون ادارے ہی حج قوانین و ضوابط کی خلاف ورزیاں کرنے والوں کے بارے میں کارروائی کے مجاز ہوں گے- وزارت داخلہ نے توجہ دلائی ہے کہ سزاؤں کے خلاف متعلقہ افراد فیصلے کی اطلاع ملنے کے 10 روز کے اندر ادارہ احتساب (دیوان المظالم) کے یہاں سزا کے فیصلے کو چیلنج کرسکتے ہیں- 

Strict laws issued against those going on Hajj without permit

In Saudi Arabia, the Ministry of Interior (Moil) has imposed severe punishments on those who perform Hajj without a permit. Has released a chart. According to newspaper 24, t laws issued against those going on Hajj. He Interior Ministry has imposed imprisonment, fines and penalties for violating Hajj rules and regulations.

Anyone who is caught without a Saudi or Gulf Hajj permit at Makkah, around the inner belt of Mina, around Muzdalifah and Arafat, and at the Haramain Sharifeen train station in Al-Rasifah, will be fined 10,000 Riya’s. laws issued against those going on Hajj Those caught outside the Hajj places will not be given the opportunity to perform Hajj.

Punishments for these violations will take effect every year on 28 Dhul-Qaeda. A Saudi and Gulf citizen will be fined for repeating one of the alleged violations for the third time. laws issued against those going on Hajj He will also be handed over to the Public Prosecution Public Prosecution will also issue orders for legal action against him.

Pilgrims who do not have a Hajj permit will be fined up to 50,000 riyals for carrying them to places of pilgrimage. The vehicle carrying the pilgrims to the Hajj places will also be confiscated. The decision of confiscation will be issued by the court and the transporter will also be advertised. He will be expelled from the country for laws issued against those going on Hajj violating non-Saudi and non-Gulf Hajj laws.

He will be expelled from the country for violating non-Saudi and non-Gulf Hajj laws. He will be barred from entering the country. Every year from 25 Shawwal, foreigners and immigrants will be barred from going to Makkah. Immigrants residing in the city of Makkah will be exempt from this, as will foreigners who are on duty there during the Hajj season, provided they have a permit from the Passport Department.

This restriction will be enforced in accordance with the royal decree issued on November 27, 2006 in accordance with the 6th Dhul-Qaeda 1427 AH. The Ministry of Interior has made it clear that only its subsidiaries, security agencies, will be authorized to take action against violators of Hajj rules and regulations. The Ministry of Home Affairs has pointed out that the persons concerned against the convictions may, within 10 days from the receipt of the notification of the judgment, challenge the judgment of the conviction before the Accountability (Diwan-ul-Mazalim).

Read More:: Interesting rituals to welcome snowfall in Baluchistan

Author: Ayesha KhanI am here! providing you latest News| Technology News |Trending Latest News Updates

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *